بند کریں
شاعری مضامینانتخاب ادب نامہ کی جانب سے کاشف حسین غائر کی شاعری سے انتخاب

انتخاب کے مزید مضامین

پچھلے مضامین - مزید مضامین
ادب نامہ کی جانب سے کاشف حسین غائر کی شاعری سے انتخاب
پیدائش 12 مارچ 1979ء ۔ رنگ خوش نما ہی نہیں بلکہ تازگی اور فرحت کا احساس بخشنے اور غزل کے میدان میں امکانات کی نوید سنانے والے انتہائی خوبصورت لب و لہجے کے شاعر جناب کاشف حسین غائر کا تعلق نواب شاہ سے ہے

پیدائش 12 مارچ 1979ء ۔ رنگ خوش نما ہی نہیں بلکہ تازگی اور فرحت کا احساس بخشنے اور غزل کے میدان میں امکانات کی نوید سنانے والے انتہائی خوبصورت لب و لہجے کے شاعر جناب کاشف حسین غائر کا تعلق نواب شاہ سے ہے اور آجکل کراچی میں مقیم ہیں۔
مارچ 2009 میں اپن ے شعری مجموعے راستے گھر نہیں جانے دیتے کے منظر عام پر آتے ہی شعری افق پر ابھرے۔
ان کے کلام سے کچھ اشعار احباب کی محبتوں کی نظر

گھر سے نکلو تو سہی راہ میں مل جائیں گے
اب بھی بیٹھے ہوئے کچھ لوگ سواری کے لیے
مجھ سے ناراض پرندو! تمھیں معلوم نہیں
میں نے یہ جال بنایا ہے شکاری کے لیے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں نہ پہنچا تو گھر گئے میرے
رات، احباب ڈر گئے میرے
میں کہاں تک گیا، نہیں معلوم
دُور تک بال و پَر گئے میرے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جا جا کے بتاتا ہوں میں ہر شاخِ سمن کو
اک پھول مجھے اپنے سرہانے سے ملا ہے
اک عمر سے تھی اپنے ہی ساۓکی تمنا
سو مجھ کو سکوں دھوپ میں آنے سے ملا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ جہاں تک راستہ موجود ہے
اس سے آگے بھی خدا موجود ہے
اِسم سے بھریے اُسے یا جسم سے
ہر جگہ، خالی جگہ موجود ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں اِس خلوت کدے میں جانے کیا کچھ تج کے بیٹھا ہوں
جگہ اِس انجمن میں کوئی آسانی سے ملتی ہے؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کاندھوں پہ تیرے آبرو مندی کا بوجھ ہے
یہ راہِ زندگی ہے قدم ٹھیک سے اٹھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہم ایسے لوگ زیادہ جیا نہیں کرتے
ہمارے بعد، ہمارا زمانہ آتا ہے
دیے جلاؤں گا یونہی میں صبح ہونے تک
وہ دل جلائے جسے دل جلانا آتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
لوگ مجھ کو مصور سمجھنے لگے
ایک تصویر سی مجھ سے کیا بن گئی
اور بھی لوگ محفل میں خاموش تھے
کیوں مری خامشی مسئلہ بن گئی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہوا چلے تو پریشان ہونے لگتے ہیں
تو کیا درخت بھی ہلکان ہونے لگتے ہیں
وہ خستگی ہے کہ غائر کسی کے آنے پر
یہ بام و در بھی پشیمان ہونے لگتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کسی کو کیا تمھیں خود بھی یقیں نہ آئے گا
تمھارے بارے میں جو پھول نے بتایا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاں، کسی کو دکھ نہ پہنچایا کبھی
عشق بھی ہم نے تو یکطرفہ کِیا
وقت بھی عجلت میں آیا تھا اِدھر
اور ہم نے بھی اُسے چلتا کِیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیسے کیسے چراغ تھے جن کا
نام تک روشنی کو یاد نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وقت سے جان چھڑالی میں نے
وہ گھڑی توڑ ہی ڈالی میں نے
کون کرتا پھرے خوابوں کا زیاں
چھوڑ دی خام خیالی میں نے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہم نے پہنا ہی نہیں غم کا لباس
ہوگیا میلا یہ۔۔۔۔ رکھا رکھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خواب کی جادو گری رہتی ہے
نیند آنکھوں میں بھری رہتی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سنبھالے گا ہمیں کیا غم ہمارا
یہ سایہ بھی ہے کوئی دم ہمارا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دِل کی دھڑکن سے سرسری نہ گزر
غور سے سُن کلام ہے دِل کا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا منصب ہے آدمی کا کہ رب
جب بھی مخاطب ہوا اسی سے ہوا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اک آدھ ہی کوئی ہو گا یہاں ہزاروں میں
جو دوسروں کو ظفریاب دیکھ سکتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سوال یہ ہے کہ اب کس طرح وصول کروں؟
نکل رہا ہے مرا کچھ اُدھار اپنی طرف
جو جی میں آئی کبھی رفتگاں سے ملنے کی
قدم اُٹھے مرے بے اختیار اپنی طرف
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بس ایک شام بچی تھی تمھارے حصے کی
مگر وہ شام بھی یاروں میں بانٹ دی میں نے
ہَوا مزاج تھا، کرتا بھی کیا سمندر کا
اک ایک لہر کناروں میں بانٹ دی میں نے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اگر میں یونہی خاک اُڑاتا رہا
یہ رستہ مرے نام ہو جائے گا
یہی زندگی ہے تو کیا سوچنا!
جو ہونا ہے انجام ہو جائے گا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گزر رہا ہوں یہ کس عالمِ ندامت سے
ثواب لگنے لگے ہیں مرے گناہ مجھے
گزارنی ہے کسی طور زندگی غائر
کوئی فقیر پکارے یا بادشاہ مجھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بکھر رہے ہیں ستارے سمٹ رہی ہے رات
بھٹک رہی ہے ہوا کُوبہ کُو ہماری طرح
کچھ اور وقت بِتاتے ہماری صحبت میں
تو بات کرتے یہ جام و سبو ہماری طرح
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جو بھی دیکھے گا مجھ کو دیکھے گا
میں نے وہ آئنہ بنایا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دشت میں مصرفِ تنہائی نہیں ہے کوئی
کیا تماشا ہے، تماشائی نہیں ہے کوئی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا خبر کیا دکھائی دینے لگے
آئنے کو مری نظر سے نہ دیکھ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جانتا ہوں کہ اسے میری ضرورت ہی نہیں
ورنہ کیا جاتا بھلا لوٹ کے آنے میں مرا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اُدھر نکلی وہ خوشبو شہرِ گُل سے
اِدھر میں باغِ ویرانی سے نکلا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اک قہقہوں کی گونج تھی جو گونجتی رہی
اک دل کا شور تھا جو سنا تک نہیں گیا
آئی ہوا خود آپ بجھانے چراغ کو
کوئی چراغ لے کے ہوا تک نہیں گیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ملال کرتے رہے وقت کے گزرنے کا
یہی تو کام بچا تھا ہمارے کرنے کا
ہے کارِ عشق وہ نیکی کہ عمر بھر ہم کو
ثواب ملتا رہے گا کسی پہ مرنے کا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چلتے چلتے جو کبھی دشت میں تھک جاتا ہوں
اک تسلی سی مجھے ابرِ رواں دیتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا عجب تھا وہ دور کا منظر
نقش سا دُوربیں پہ چھوڑ گیا
جانے کیا سوچ کر ستارہ ساز
کچھ ستارے زمیں پہ چھوڑ گیا
آستیں چھوڑ تو گیا وہ سانپ
پر نشاں آستیں پہ چھوڑ گیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا خاک مری خاک میں امکان ہو پیدا
ناپید ہیں موجود و میسر مرے آگے
کل رات جگاتی رہی اک خواب کی دوری
اور نیند بچھاتی رہی بستر مرے آگے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میری دیوانگی سے واقف تھا
جس نے صحرا میں گھر دیا ھے مجھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جو میرے لوگ ہیں، مجھ تک پہنچ ہی جائیں گے
وہ میرا تذکرہ اک دن یہاں وہاں سُنتے
مزہ تو جب ہے یونہی زندگی گزر جائے
یہ رات جیسے کٹی ہے کہانیاں سُنتے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس نے دل کو بنا کے آئینہ
ٹوٹ جانے کا ڈر دیا ھے مجھے
میرے اندر کے شور نے غائر
کیسا خاموش کر دیا ھے مجھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہمارے بس میں نہیں ہے ہمارا کام کوئی
ہمارا سوچنا بےکار ہے ہمارے لیے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کاشف حسین غائر

(0) ووٹ وصول ہوئے

: مضامین سےمتعلقہ شعراء