Mumtaz Gurmani Ki Shaeri Se Intikhab By Adab Nama

ادب نامہ کی جانب سے ممتاز گرمانی کی شاعری سے انتخاب

Mumtaz Gurmani Ki Shaeri Se Intikhab By Adab Nama

پیدائش 02 مئی 1975۔ ضلع ڈیرہ غازیخان کی تحصیل تونسہ کے ایک گائوں لٹڑی شمالی سے تعلق ہے۔ خوبصورت لب و لہجے کے شاعر اور نفیس انسان

پیدائش 02 مئی 1975۔ ضلع ڈیرہ غازیخان کی تحصیل تونسہ کے ایک گائوں لٹڑی شمالی سے تعلق ہے۔ خوبصورت لب و لہجے کے شاعر اور نفیس انسان ۔ بچپن میں پولیو مرض کے باعث بیساکھی کا سہارا لیتے ہیں اور اپنے ہی گائوں میں زمینداری کرتے ہیں۔ مجموعہ کلام ابھی منظر۔ عام پر نہیں آیا۔
ان کے خوبصورت کلام سے چند اشعار آپ احباب کی محبتوں کی نظر

کھنچتی لکیر سہہ نہ سکا گھر کے صحن میں
آخر ضعیف باپ کو گھر چھوڑنا پڑا
اے دوست، میری وحشت۔

۔ آخر نہ آزما
تجھ کو بھی چھوڑ دوں گا، اگر چھوڑنا پڑا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہم نے اک عمر کتابوں کے حوالے کی ہے
تب کہیں جا کے کتابوں کے حوالے ہوئے ہیں
آئینہ بن کے کھڑے ہیں ترے در پر چپ چاپ
کب ترے سامنے ہم بولنے والے ہوئے ہیں
۔

(جاری ہے)

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پہلا عشق بھلانا ہے تو دوجا کر لے
عشق کا زہر تو عشق ہی زائل کر سکتا ہے
۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہم کو منظور نہیں پھر سے بچھڑنے کا عذاب
اس لیے تجھ سے ملاقات نہیں چاہتے ہیں
کب تلک در پہ کھڑے رہنا ہے، اُن سے پوچھو
کیا وہ محشر کا تماشہ بھی یہیں چاہتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سرخ آنچل میں لپٹا ھوا بانکپن، مجھ کو حیرانیوں کے جہاں دے گیا
جیسے دلہن گلابوں بھری سیج پر، منہ دکھائ میں دولہے سے جاں مانگ لے
بھر لوں آنکھوں میں پکھراج و نیلم سبھی، سرخ یاقوت بھی، لعل و مرجان بھی
میں سجا لوں دکان_ جواہر ذرا، پھر وہ چاھے تو پوری دکاں مانگ لے
میرے ھونٹوں پہ ھر دم سجی رہ گئ ، اک دعا میری حسرت بنی رہ گئ
اس ملاقات میں اپنے رخسار پر، کیا خبر میرے لب کے نشاں مانگ لے
۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں خلاؤں کے سفر پر ہوں نکلنے والا
چاند سورج میرے زینوں سے پرے ہٹ جائیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ دشمنوں کی صف میں تھا، اسی لیے کلام بھی
کمان کھینچ کر کیا کہ رابطہ بنا رہے
اسے پسند آ گئیں پلک پلک پہ جھالریں
سو میں نے ان کو تر کیا کہ رابطہ بنا رہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ اور بات شجر سر نگوں پڑا ہوا تھا
زمیں سے اس نے مگر رابطہ رکھا ہوا تھا
اندھیرے نوچ رہے تھے جمال دھرتی کا
مری زمین کا سورج کہیں گیا ہوا تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہے موج موج مخالف مرے سفینے کی
اور اس پہ کھولنے والا ہوں بادبان کو میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پانی بھرنے ایک کنویں پر جاتی تھی
اس کا پانی میٹھا ہوتا جاتا تھا
۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے ستاروں کی گردشوں سے ڈرائے گا کیا نصیب میرا
کہ میں بگولوں کے ساتھ صحرا میں رقص کرتا جواں ہوا تھا
بڑا تعجب ہے، تیری آنکھوں کی اک تجلی سے جل گیا ہوں
وگرنہ شعلوں کی آنکھ پر میں گراں گزرتا جواں ہوا تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اک پری زاد نے آنکھوں میں بھرا تھا کاجل
اب وہ کاجل مری آنکھوں کا زیاں ہے بابا
۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس نے تکیے پہ کاڑھ دیں بیلیں
میری آنکھوں میں پھول اگ آئے
پہلے آنکھوں میں ایک گلاب کھلا
پھر قطاروں میں پھول اگ آئے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں ایسے شعر کہوں گا کہ تو نظر آۓ
سماعتوں میں بصارت بھرا کروں گا میں
نہ کوئ جھانکتی آنکھیں، نہ ادھ کھلی کھڑکی
یوں اس کے شہر میں کب تک پھرا کروں گا میں
۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چھین کر ناز ہرنیوں کے بھی
اس کی رفتار کو دیے گۓ تھے
شعر کہتا ھے ، مار دیتا ھے
مجھ کو الزام دو دیے گۓ تھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں نے کچھ رنگ چراۓ تھے کسی تتلی کے
اور پھر عمر حفاظت میں بتانی پڑی تھی
کل کسی عشق کے بیمار پہ دم کرنا تھا
پیر_کامل کو غزل میری سنانی پڑی تھی
۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
الجھنا آسمانوں سے تھا مجھ کو
زمیں والے مجھے اچھے لگے تھے
خدا جانے یہ بارش کب تھمے گی
مری بستی کے بچے کہہ رھے تھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس کی آنکھوں کو میں ہاتھوں سے چھپا لیتا ہوں
پھر وہ لڑکی مجھے پہچان لیا کرتی ہے
اک شکاری ہے بہت شوخ نگاہوں والا
ایک چڑیا ہے نشانے پہ جیا کرتی ہے
۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب بھی اس راجکماری کے بدن کی خوشبو
آنے لگتی ھے مجھے صحن کی ویرانی سے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پتے گرے تو جسم چھپانے کے واسطے
پیڑوں نے اپنا آپ پرندوں سے بھر لیا
میں نے کہا کہ رات کی رانی سے کر گریز
خوشبو نے میری بات کا الٹا اثر لیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سبز بیلیں گلی میں اتر آئ تھیں
دل نے مجھ سے کہا، میں نہیں جا رھا
روح سے جسم نے وقت_رخصت کہا
اپنی گٹھڑی اٹھا، میں نہیں جا رھا
۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تم اپنا وار کرو ، رائیگاں نہیں ھوگا
خدا کا شکر کہ اس نے گلا دیا ھے مجھے
میں اپنا عشق مکرتا ھوں، داغدار نہ ھو
کسی شریف کی چادر کا سوچنا ھے مجھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
برتن برتن چیخ رہی تھی کون سمجھتا اس کی بات
دل کا برتن خالی تھا اس برتن بیچنے والی کا
گال کی جانب جھکتی ھے، شرماتی ھے، ہٹ جاتی ھے
آج ارادہ ٹھیک نہیں ھے جان تمہاری بالی کا
۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہوا بہت ہی تیز تھی، میں اس کی بارگاہ تک
خبر نہیں کہ کس طرح سنبھال کر دیا گیا؟
وہ تتلیوں کے رنگ دیکھ کر نہ شاخ چھوڑ دے
گلاب کو بھی صاحب۔۔ جمال کر دیا گیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں یوں بھی ناقدین سے رہتا ہوں دور دور
کمبخت کھال اتارنے لگتے ہیں بال کی
اب تاج اتار دیجیے صاحب یہ دشت ہے
یہ جا نہیں حضور کے جاہ و جلال کی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ممتازگورمانی

(1673) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعر

مزید مضامین

Aor Yeh Dosti Rahay Gi Bhi

اور یہ دوستی رہے گی ابھی (ابرار احمد ) از قلم۔نصیر احمد ناصر

Aor yeh dosti rahay gi bhi

Khuwaja Ghulam Farid

صوفی شاعر حضرت خواجہ غلام

Khuwaja ghulam Farid

Faizan Hashmi Ki Shaeri Me Se Intikhab

سر گودھا سے تعلق رکھنے والے خوبصورت شاعر فیضان ہاشمی کی شاعری سے انتخاب ۔۔۔۔۔۔۔۔ نصراللہ حارث

Faizan Hashmi ki shaeri me se intikhab

Adnan Basheer Ki Shaairi Me Se

عدنان بشیر کی شاعری میں سے انتخاب

Adnan Basheer ki shaairi me se

Hammad Niazi Ki Shaeri Se Intikhab By Adab Nama

ادب نامہ کی جانب سے حماد نیازی کی شاعری سے انتخاب

Hammad Niazi ki shaeri se intikhab by Adab Nama

Zafar Gurakhpuri .... Aik Ehd, Aik Shair

ظفر گورکھپوری ۔۔۔۔۔۔ ایک عہد، ایک شاعر

Zafar Gurakhpuri .... aik ehd, aik shair

Fehmida Riaz Sahiba Se Aik Mulaqat

فہمیدہ ریاض سے ملاقات ( بشکریہ: بی بی سی اردو منظرنامہ)

Fehmida Riaz sahiba se aik mulaqat

Abdul Basit Saim Ki Shaeri Se Intikhab

ادبی فورم انحراف کی طرف سے عبدالباسط صائم کی شاعری سے انتخاب

Abdul Basit Saim ki shaeri se intikhab

Ustad Qamar Jalalvi

استاد قمر جلالوی کا تعارف اور انکی شاعری سے انتخاب (خالد محمود )

ustad qamar jalalvi

Shaheen Abbas Ki Shaairi Se Intekhab

شاہین عباس کی شاعری میں سے انتخاب

Shaheen Abbas ki shaairi se intekhab

Zuban Hae Tu Jahan Hae

زبان ہے تو جہان ہے

Zuban hae tu Jahan hae

Fiaz Aswad Ki Shaeri Se Intikhab

ادب نامہ کی طرف سے فیاض اسود کی شاعری سےانتخاب

Fiaz Aswad ki Shaeri se intikhab

Wasee Canvas Ka Shaair, Shaheen Abbas

وسیع کینوس کا شاعر ۔۔ شاہین عباس

Wasee canvas ka shaair, Shaheen Abbas

Syed Ali Abbas Jalalpuri

سید علی عباس جلالپوری تحریر : پروفیسر لالہ رخ بخاری

Syed Ali Abbas Jalalpuri

Ghulam Muhammad Qasir

غلام محمد قاصر

Ghulam Muhammad Qasir

Haroon Tariq Ka Khasoosi Interview

ہارون طارق کا خصوصی انٹرویو

Haroon Tariq Ka Khasoosi Interview

Your Thoughts and Comments

Mumtaz Gurmani Ki Shaeri Se Intikhab By Adab Nama. Read Special Urdu Poetry related articles, Latest Poetic Columns & Tributes on Urdu poets. Read article Mumtaz Gurmani Ki Shaeri Se Intikhab By Adab Nama and other Urdu shaiyre mazameen in Urdu. Read Urdu poets profiles, new poetry and mazameen like Mumtaz Gurmani Ki Shaeri Se Intikhab By Adab Nama only on UrduPoint.