Nazeer Qaisar Ki Shaeri Se Intikhab By Adab Nama

ادب نامہ کی طرف سے جناب نذیر قیصر کی شاعری سے انتخاب

Nazeer Qaisar Ki Shaeri Se Intikhab By Adab Nama

انتہائی سادہ اور میٹھی زبان، خوبصورت لہجے اورجدید طرز۔ احساس کی دولت سے مالا مال شاعر نذیر قیصر صاحب کا تعلق مرید کے سے ہے ۔ آجکل لاہور میں مقیم ہیں۔ بظاہر اجنبی اور دور افتادہ چیزوں کو نئے زشتوں میں منسلک کرنے کے فن ان کی شاعری کا خاصہ ہے

پیدائش 1945-01-05
انتہائی سادہ اور میٹھی زبان، خوبصورت لہجے اورجدید طرز۔ احساس کی دولت سے مالا مال شاعر نذیر قیصر صاحب کا تعلق مرید کے سے ہے ۔ آجکل لاہور میں مقیم ہیں۔ بظاہر اجنبی اور دور افتادہ چیزوں کو نئے زشتوں میں منسلک کرنے کے فن ان کی شاعری کا خاصہ ہے۔

ان کی تصانیف و تالیف میں " پاکستان کی سیاسی صورتحال اور مسیحی اقلیت، زیتون دی پتی، نئے عہد کے گیت، دانش کا بحران، رجحانات، گنبد خوف سے بشارت 1984ء، آنکھیں، چہرہ ہاتھ 1968، تیسری دنیا 1979 ، اے ہوا مئوذن ہو 1992، اے شام ہم سخن ہو 1992، محبت ہو بھی سکتی ہے 2010، تمھارے شہر کا موسم1993 اور محبت میرا موسم ہے2013 شامل ہیں۔

ان کے کچھ شعری مجموعوں سے کلام آپ احباب کی خدمت میں پیش ہے۔

یہ ہم جو آجکل روزانہ اک دوجے سے ملتے ہیں
اگر ملتے رہے اک دن محبت ہو بھی سکتی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سب چراغوں نے لگا رکھی ہیں آنکھیں تجھ پر
سب چراغوں کو بجھا کر تجھے لے جاؤں گا
جاگنے والے تجھے ڈھونڈتے رہ جائیں گے
میں ترے خواب میں آ کر تجھے لے جاؤں گا
۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دیواروں سے باتیں کرنا اچھا لگتا ہے
ہم بھی پاگل ہو جائیں گے ایسا لگتا ہے
کس کو پتھر ماریں قیصر کون پرایا ہے
شیش محل میں ہر اک چہرہ اپنا لگتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تمہارے شہر کا موسم بڑا سہانا لگے
میں ایک شام چرا لوں اگر برا نہ لگے
جو ڈوبنا ہے تو اتنے سکون سے ڈوبو
کہ آس پاس کی لہروں کو بھی پتہ نہ لگے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دیا جلایا تن سے دھول اتاری ہے
یہ سب تم سے ملنے کی تیاری ہے
سر پر جو گٹھڑی ہے اس کا بوجھ نہیں
گٹھڑی میں جو سپنا ہے وہ بھاری ہے
۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مہکتی بھیگتی جاتی تھی شام چھتری میں
وہ بارشوں کی طرح مسکرایا کرتی تھی
میں سوچتا تھا اسے اور میرے سینے میں
وہ فاختہ کی طرح پھڑپھڑایا کرتی تھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ایک بوند چھلکانی ہے اک چھاگل بھرنی ہے
میں نے سمندر کی خاموشی واپس کرنی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہنستے مہکتے چہرے اچھے لگتے ہیں
البم تصویروں سے بھرتی جاتی ہے
لڑکی ہے کہ رنگ چھلکتے جاتے ہیں
آئینے میں شام سنورتی جاتی ہے
۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سر ہوتا ہے اور کسی کے کاندھے پر
دل میں کوئی اور سمایا ہوتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جو بھی محبت ہوتی ہے
پہلی محبت ہوتی ہے
جیسے ہم خود ہوتے ہیں
ویسی محبت ہوتی ہے
۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گھل مل جاتے تھے دو سائےدو لہروں کی صورت
دیا جلا کر ہم اس کی لو ڈھانپ لیا کرتے تھے
اسی لیے تو صبح ہماری آنکھ نہیں کھلتی تھی
سونے سے پہلے جی بھر کے جاگ لیا کرتے تھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں اپنے نام کی تختی الٹ کر
چلا آیا ہوں اپنے گھر پلٹ کر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ اور بات ملاقات پھر کبھی ہوئی نہ ہوئی
وہ شخص مجھ سے کئی بار ملنے آیا بھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مری ساری عمر اداس ہے
مجھے ساری عمرکا پیار دو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک چڑیا جو اڑ نہیں سکتی
دھوپ میں اپنے پر سنوارتی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
زندگی بھی خوبصورت چیز ہے
بس کسی سے پیار ہونا چاہیے
۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شام کے پیچھے شام کھڑی تھی
پیڑ کے پیچھے پیڑ کھڑا تھا
آنکھوں کا جنگل تھا جس میں
تو نے مجھ کو پہن لیا تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تم اتنی خوبصورت ہو
تمہیں کس بات کا غم ہے
۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آنکھیں رکھ دیں اس نے گھر کے دروازے پر
شام ہوئی اور خالی رستہ واپس آیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بچے نے تتلی پکڑ کر چھوڑ دی
آج مجھ کو بھی خدا اچھا لگا
شام جیسے آنکھیں جھپکانے لگی
اس کے ہاتھوں میں دیا اچھا لگا
۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
موم بتی سی انگلیوں کے ساتھ
وہ مرا بھیگا کوٹ اتارتی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
لڑکی سے ڈرا ہوا سایا
سائے سے ڈری ہوئی لڑکی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گرتے جاتے ہیں پھول بستر پر
کھلتا جاتا ہے تھان ہاتھوں میں
اس نے ہاتھوں پہ ہونٹ کیا رکھے
آ گئی ساری جان ہاتھوں میں
۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آج مجھے بھی اُس کی یاد نہیں آئی
وہ بھی میرے خواب میں آنا بھول گیا
چلتے چلتے میں اس کو گھر لے آیا
وہ بھی اپنا ہاتھ چھڑانا بھول گیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں آنکھیں بند کرتا ہوں تو قیصر
کوئِ خوابیدہ منظر جاگتا ہے
۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آوازیں دیتا ہے مجھ کو
کوئی میرے جیسا مجھ میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ لہر لہر بدن ٹوٹ ہی نہ جائے کہیں
خمارِ حسن کی انگڑائیاں مجھے دے دو
میں تم کو یاد کروں اور تم چلے آؤ
تم اپنے پیار کی سچائیاں مجھے دے دو
۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس کی آنکھیں میری ماں سے ملتی ہیں
پہلی بار اسے پہچانا ہے میں نے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سو تو جائوں گا میں اکیلا بھی
جاگنا تیرے ساتھ چاہتا ہوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ مرے دھیان میں گم بیٹھی ہے
بال کھولے ہیں ہوا نے اس کے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس شبنم میں ہونٹ بھگوئے جا سکتے ہیں
ان رنگوں میں ہاتھ ڈبویا جا سکتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میں خود اپنی طرف آ رہا ہوں
کوئی میرے قدم گن رہا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پگھلتی جا رہی ہیں اس کی آنکھیں
وہ شاید مسکرانا چاہتی ہے
بہت بارش ہے دروازے کے باہر
مگر وہ بھیگ جانا چاہتی ہے
۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اک دیا اس کے پاس میرا ہے
اک کرن میرے پاس اس کی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یاد تھی اس کو میری سالگرہ
چاند نکلا تو وہ چھت پر آیا
اس نے جاتے ہوئے قیصر مجھ کو
پیار سے دیکھا تو دل بھر آیا
۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کہیں چراغ کہیں راستے نہیں ملتے
ہم ایک شہر میں ہوتے ہوئے نہیں ملتے
تمام شہر سر۔ شام سونے لگتا ہے
یہاں کے لوگ کبھی رات سے نہیں ملتے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کبھی فرصت ملے تو آ جائو
تم سے اک شخص کو ملانا ہے
۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ جب میری حفاظت کر رہا تھا
مجھے اس رات سونا چاہیے تھا
سلامت ہوں جدا ہو کر بھی تم سے
مجھے برباد ہونا چاہیے تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جتنی مجھ سے تمبیں محبت ہے
زندگی اُس حساب سے کـم ہے
۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دُور تک پھول برستے ہی چلے جاتے ہیں
جب وہ ہنستی ہے تو ہَنستی ہی چلی جاتی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دیر سے بیٹھے ہیں دو اجنبی اِک کمرے میں
اور بارِش کہ برستی ہی چلی جاتی ہے
۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اپنے ہاتھوں کے دیے نے ہم کو
اپنے سائے سے ڈرا رکھا ہے
دل میں سو زخم ہیں لیکن ہم نے
پھول کالر میں سجا رکھا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ رات یاد ہے جب جسم کی فصیلوں سے
پکارتے رہے سائے گزر گئے ہم تم
۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ دیکھ کر مجھے اداس ہو گئی
مگر مرا ملال کوئی اور تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
فلک سے لڑتا رہا خاک پر بکھرتا رہا
بہت خراب ہوا میں خدا کے ہونے سے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میوزیم میں شہنشاہوں کی یہ تلواریں
مرے لہو کی مہک ہے پرانی دھاتوں میں
کہیں پہ رک کے لپٹ جائیں ایک دوجے سے
سفر تمام نہ ہو جائے باتوں باتوں میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں اس لہر کو چوم کے آگے جا سکتا ہوں
لیکن آگے جانے سے بھی کیا ہوتا ہے
۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سنسناتی تھی ہوا کمرے میں
پیڑ خاموش کھڑے تھے باہر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پہن رہا ہوں جنہیں میں، وہ زخم اس کے تھے
چکا رہا ہوں جو میں، وہ حساب اس کا تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نقش وہ کھینچ جسے رنگ ملیں دنیا سے
لفظ وہ لکھ جو زمانے سے معانی مانگے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میری طرح اکیلی ہے
بارش مری سہیلی ہے
چڑیاں شور مچاتی ہیں
سہمی ہوئی حویلی ہے
۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ناؤ جاگتی ہے اور لہریں سوتی ہیں
ندیا سے مانجھی کا سپنا گہرا ہے
پلکیں ہیں کہ دل میں شام اتر آئی
آنکھیں گہری ہیں کہ سرمہ گہرا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تیرے پیار میں ڈوب گیا میں سر کے بالوں تک
گہری نیلی آنکھوں والی کیا ہے تیرا نام
۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اتنا بھی نہ ملا کر کسی سے
ہو جائے گا پیار زندگی سے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
لپٹ کے مجھ سے اسے نیند بھی بہت آئی
وہ ساری رات مرے ساتھ جاگتا بھی رہا

(667) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعر

مزید مضامین

Tehzeeb Hafi Ki Shaeri Se Intikhab By Adab Nama

ادب نامہ کی طرف سے تہذیب حافی کی شاعری سے انتخاب

Tehzeeb Hafi ki shaeri se intikhab by Adab Nama

Shaheen Abbas Ki Shaairi Se Intekhab

شاہین عباس کی شاعری میں سے انتخاب

Shaheen Abbas ki shaairi se intekhab

BhaensaiN Palnay Wala Shaer

بھینسیں پالنے والا شاعر

BhaensaiN palnay wala shaer

Karachi Festival Ka Ehwal

کراچی لٹریچر فیسٹیول کا احوال

Karachi festival ka ehwal

Ahmad Khiyal Ki Shaeri Se Intikhab By Adab Nama

ادب نامہ کی طرف سے احمد خیال کی شاعری سے انتخاب

Ahmad Khiyal ki shaeri se intikhab by Adab Nama

Hammad Niazi Ki Shaeri Se Intikhab By Adab Nama

ادب نامہ کی جانب سے حماد نیازی کی شاعری سے انتخاب

Hammad Niazi ki shaeri se intikhab by Adab Nama

Syed Ali Abbas Jalalpuri

سید علی عباس جلالپوری تحریر : پروفیسر لالہ رخ بخاری

Syed Ali Abbas Jalalpuri

Hassan Abbasi Ka Khasoosi Interview

حسن عباسی کا خصوصی انٹرویو

Hassan Abbasi Ka Khasoosi Interview

Zia Turk Ki Shairi Me Se Intekhab By Hammad Niazi

ضیا المصطفی ترک کی شاعری میں سے انتخاب

Zia turk ki shairi me se intekhab by Hammad Niazi

Faizan Hashmi Ki Shaeri Me Se Intikhab

سر گودھا سے تعلق رکھنے والے خوبصورت شاعر فیضان ہاشمی کی شاعری سے انتخاب ۔۔۔۔۔۔۔۔ نصراللہ حارث

Faizan Hashmi ki shaeri me se intikhab

Kaee Zamanoon Ka Shaair ..Afzal Khan

کئی زمانوں کا شاعر ۔۔۔ افضل خان

kaee zamanoon ka shaair ..Afzal Khan

Zia Ul Mustafa Turk Ki Kitab Ka Tajzia

ضیاءالمصطفیٰ ترک کی کتاب پر ایک تجزیہ "شہر پس _چراغ" سے گزرتے هوئے۔حماد نیازی

Zia ul mustafa turk ki kitab ka tajzia

Khurum Afaq Ki Shaeri Se Intikhab By Adab Nama

ادب نامہ کی طرف سے خرم آفاق کی شاعری سے کیا جانے والا انتخاب

Khurum Afaq ki shaeri se intikhab by Adab Nama

Adnan Basheer Ki Shaairi Me Se

عدنان بشیر کی شاعری میں سے انتخاب

Adnan Basheer ki shaairi me se

Sameena Raja

ثمینہ راجا ۔۔۔ ایک سچی شاعرہ

Sameena Raja

Kashif Majeed Ki Shaairi Se Intekhab

کاشف مجید کی شاعری سے انتخاب

Kashif Majeed ki shaairi se intekhab

Your Thoughts and Comments

Nazeer Qaisar Ki Shaeri Se Intikhab By Adab Nama. Read Special Urdu Poetry related articles, Latest Poetic Columns & Tributes on Urdu poets. Read article Nazeer Qaisar Ki Shaeri Se Intikhab By Adab Nama and other Urdu shaiyre mazameen in Urdu. Read Urdu poets profiles, new poetry and mazameen like Nazeer Qaisar Ki Shaeri Se Intikhab By Adab Nama only on UrduPoint.