بند کریں
شاعری مضامینانتخاب ادب نامہ کی طرف سے رانا عامر لیاقت کی شاعری سے انتخاب

انتخاب کے مزید مضامین

پچھلے مضامین - مزید مضامین
ادب نامہ کی طرف سے رانا عامر لیاقت کی شاعری سے انتخاب
ضلع نارووال کی تحصیل ظفر وال سے تعلق رکھنے والے ایک نوجوان شاعر جنہوں نے حال ہی میں گجرات یونیورسٹی سے کیمیکل انجینئرنگ کی اور اس دوران یونیورسٹی کی ادبی تنظیم قلمکار کے صدر بھی رہے۔

تعارف : ضلع نارووال کی تحصیل ظفر وال سے تعلق رکھنے والے ایک نوجوان شاعر جنہوں نے حال ہی میں گجرات یونیورسٹی سے کیمیکل انجینئرنگ کی اور اس دوران یونیورسٹی کی ادبی تنظیم قلمکار کے صدر بھی رہے۔
ان کی غزلوں سے چند اشعار کا انتخاب آپ سب کی محبتوں کا منتظر ہے

_____________________________

پھر وہ لوٹ آئی زندگی کی طرف
میرے ہونٹوں سے شکریہ نکلا
تجھ سے کہنا تھا حال ِ دل لیکن
تو بھی اے دوست آ ئنہ نکلا

_________________________

گلے لگا کے مجھے پوچھ مسئلہ کیا ہے
میں ڈر رہا ہوں تجھے حال _ دل سنانے سے

_________________________

نکتہ یہی ازل سے پڑھایا گیا ہمیں
حوا براۓ حسن ہے آدم براۓ عشق

___________________________

ہزار رستے ترے ہجر کے علاج کے ہیں
ہم اہل _ عشق ذرا مختلف مزاج کے ہیں

____________________________

مانوس روشنی ہوئی میرے مکان سے
وہ جسم جب نکل گیا، ریشم کے تھان سے
تجھ آنکھ سے جھلکتا تھا، احساسِِ ِ زندگی
میں دیکھتا رہا ہوں تجھے خاکدان سے

____________________________

میں ہاؤ ہو پہ کہانی کو ختم کر دوں گا،
یہ عام بات نہیں ہے ، اسے خبر لیا جاۓ

__________________________

آؤ آنکھیں ملا کے دیکھتے ہیں
کو ن کتنا اداس رہتا ہےــــــ!

__________________________
اس دور ِ نامراد سے یہ تجربہ ہوا
دیوار گفتگو کے لئے بہترین ہے

___________________________

محبتوں کے لئے عمر کم ہے سووہ شخص،
سبھی شکائتیں کچھ دن ادھر ادھر کر دے

_______________________________

اپنا آپ پڑا رہ جاتا ہے بس اک اندازے پر
آدھے ہم اس دھرتی پر ہیں آدھے اس سیارے پر

_______________________________________

جیت اور ہار کا امکان کہاں دیکھتے ہیں

گاؤں کے لوگ ہیں نقصان کہاں دیکھتے ہیں

قیمتی شے تھی ترا ہجر اٹھائے رکھا
ورنی سیلاب میں سامان کہاں دیکھتے ہیں

____________________________________

خدا کا شکر، کہ آہٹ سے خواب ٹوٹ گیا
میں اپنے عشق میں ناکام ہونے والا تھا

___________________________

اک تصویر پیا کی اُبھری منظر سے

بھولی لڑکی جا ٹکرائی پتھر سے

ایسی پیاری شام میں جی بہلانے کو
پاؤں نکالے جا سکتے ہیں چادر سے
پہلے پہل کے عشق میں اکثرہوتا ہے
اچھے اچھے لگ جاتے ہیں بستر سے

_____________________________

دل قناعت ذراسی کرتاتو،
ہرمحبت تھی آخری میری
وصل نقصان کر گیا میرا،
مرگئی آج شاعری میری

______________________________

اینٹ سے اینٹ جوڑ کر، خواب بنا رہا ہوں میں
رخنے نہ ڈال میرے یار، خواب کی دیکھ بھال میں
جھ کو بتائیں کس طرح، بیٹھے ہیں کیسے حال میں
دنیا میں ایسا کیا ہے جو، آتا نہیں وبا ل میں
ڈھونڈتے پھر رہے ہیں ہم ایسے شکاری ہاتھ کو
ارض و سماں کی وسعتیں، قید ہوں جس کے جال میں

_______________________________________

آدھے گھر میں، میں ہوتا ہوں آدھے گھر میں تنہائی
کو ن سی چیز کہاں رکھ دی ہے کون مجھے بتلائے گا
  پیاراک ایسا کاسہ ہے جس کی گہرائی مت پوچھو
جتنے سکے ڈالو گے اتنا خالی رہ جائے گا

_______________________________________

کئی طرح کے تحائف پسند ہیں اُس کو
مگر جو کام یہاں پھول سے نکلتا ہے
میں جانتا ہوں محبت میں کیا نہیں کرنا
یہ وہ جگہ ہے جہاں قیس بھی پھسلتا ہے

______________________________________

اگرچہ روز مرا صبر آزماتا ہے
مگر یہ دریا مجھے تیرنا سکھاتا ہے

یہ کیا گُھٹن ہے محبت کی پہرہ داری میں

وہ کاغذوں پہ کُھلی کھڑکیاں بناتا ہے
میں اُس کی نظروں کا کچھ اس لئے بھی ہوں قائل
وہ جس کو چاہے اُسے دیکھنا سکھاتا ہے
اُسے پتہ ہے کہاں ہاتھ تھامنا ہے مرا
اُسے پتہ ہے کہاں پیڑ سوکھ جاتا ہے

__________________________________

رانا عامر لیاقت

(2) ووٹ وصول ہوئے

: مضامین سےمتعلقہ شعراء