بند کریں
شاعری مضامینانتخاب ادب نامہ کی طرف سے ضامن عباس کاظمی کی شاعری سے انتخاب

انتخاب کے مزید مضامین

پچھلے مضامین - مزید مضامین
ادب نامہ کی طرف سے ضامن عباس کاظمی کی شاعری سے انتخاب
ساہیوال سے تعلق رکھنے والے ایک نوجوان شاعر جنہوں نے انجینئرنگ یونیورسٹی لاہور سے جیولوجیکل انجینئرنگ کی اور آج کل روزگار کے سلسلے میں لاہور مقیم ہیں۔ یونیورسٹی دور میں ادبی سرگرمیوں میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیا اور یونیورسٹی کی ادبی تنظیم کے صدر بھی رہے۔

ساہیوال سے تعلق رکھنے والے ایک نوجوان شاعر جنہوں نے انجینئرنگ یونیورسٹی لاہور سے جیولوجیکل انجینئرنگ کی اور آج کل روزگار کے سلسلے میں لاہور مقیم ہیں۔ یونیورسٹی دور میں ادبی سرگرمیوں میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیا اور یونیورسٹی کی ادبی تنظیم کے صدر بھی رہے۔ ان کے کلام سے کچھ اشعار آپ کی خدمت میں پیش ہیں

ایک دو بار تو روکوں گا مروت میں تجھے
سینکڑوں بار تو اصرار نہیں کر سکتا
باغ میں ایک بھی پھول ایک بھی پھل کے ہوتے
تو مجھے زیست سے بیزار نہیں کر سکتا
جیسے میں دوستوں سے ہنس کے گلے ملتا ہوں
کوئی معمولی اداکار نہیں کر سکتا
کیوں نہ دنیا پہ نئی بات میں کالم لکھ دوں
ختم تو میں اسے سرکار نہیں کر سکتا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قوت۔فکر بھی دی ایسے کہ اک حد میں رہو
یعنی بیکار سمجھدار بناۓ گئے ہم
اولیں ہجر سے دو چار کیا حق نے ہمیں
مستزاد اس پہ کہ تجھ سے بھی ملاۓ گئے ہم
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مرگ۔احساس پہ اس درجہ خموشی۔۔۔ دنیا
کوئی اعلان نہیں کوئی منادی بھی نہیں
یہ الگ بات مرا مسئلہ مادہ ہے مگر
دیکھا جاۓ تو مرا مسئلہ مادی بھی نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چل آ کہ دہر سے کذب و ریا کشید کریں
کسی کے جرم سے اپنی سزا کشید کریں
ہم ایسے خانہ بدوشوں کی کیا حدیں ہیں یھاں
جو وقت ہاتھ میں لے کر جگہ کشید کریں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ڈائری کے پھول دیمک کھا گئی
تیری فرقت بے نشانی ہو گئی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یاد۔یاراں بھی چھین لی تو نے
اے غم۔روزگار بس کر دے
آگ میں جھونک دے محبت کو
بس بھی کر دے او یار بس کر دے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کسی کی اک غلط فہمی
کسی کی زندگی کا دکھ
تمھارے بولنے کا ڈر
تمہاری خامشی کا دکھ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ارشمیدس نے تو لیور پہ اٹھا لی دنیا
ہم سے اک شخص کا آزار اٹھایا نہ گیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ کہہ رہا تھا برائی ، برائی جنتی ہے
سو اسکے واسطے لے کر کنول گیا ہوں میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ سوگ ختم کیا جاۓ یا کیا جاۓ
تمھارے ہجر کو گنگا بہا دیا جاۓ ؟
ہیں کامیابی پہ حاسد شکست پر برہم
بتاؤ ایسے مزاجوں کا کیا کیا جاۓ
یہ سرد شام جو کہرے میں لپٹی جاتی ہے
تو کیا خیال ہے نصرت لگا دیا جاۓ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پہلے بھی جس پہ مرے صبر کی حد ختم ہوئی
تو نے کر دی نا وہی بات دوبارہ مرے دوست
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ جس کو آپ نے نایاب پینٹنگ کہا ہے
مجھے تو پانچ چھ رنگوں کے چار خانے لگے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہوتی پرکھ ہے اچھے برے کی اسی جگہ
جب وسوسے میں ڈال کے شیطان چھوڑ دے
پانی چھڑک رہا ہے وہ میرے غبار پر
اس سے کہو کہ اب تو مری جان چھوڑ دے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہجر ہوگا نہ کوئی ہجر نوحہ ہوگا
باز آتے ہیں محبت سے ۔۔جو ہوگا ۔۔ہوگا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہماری بات کاٹی جا رہی ہے
کسی کا حوصلہ بڑھتا رہا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آپ کو حق ہے ۔۔ فخر کر لیجے
آپ کا ان سے رابطہ ٹھہرا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کون بھلا دل سے رونے پر خوش ہوتا ہے
نیلی چھتری والے ۔۔۔تیری مرضی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شجر کی چھال پر جو آڑھی ترچھی سی لکیریں ہیں
انہیں دیکھا تو مجھ کو اپنی قسمت کا گماں گزرا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک سگریٹ ہے ہاتھ میں سلگا
اور سینے میں دل بجھا ہوا ہے
ہاں مجھے ایک بات یاد آئ
دیر سے ناشتہ پڑا ہوا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں جو کہتا ہوں مجھ سے دور رہو
یہ نصیحت ہے التماس نہیں
تجھ کو مروایں گی تری آنکھیں
میرا دعویٰ ہے یہ قیاس نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہمیں سمجھنے کا دعویٰ ہے سر بسر جھوٹا
تمہیں ہمارا پتا ہے درست ہے پھر بھی
سوال۔وصل پہ اک بار اور غور کریں
بجا کہ سوچ لیا ہے درست ہے پھر بھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تمہاری بات سے اتنا بھی دکھ نہیں پھنچا
مگر جو پھنچا تمھاری وضاحتوں سے مجھے
وہی زمیں تھی وہی لوگ تھے وہی باتیں
طعام مل گیا اچھا زیارتوں سے مجھے

(0) ووٹ وصول ہوئے

: مضامین سےمتعلقہ شعراء