Zeeshan Haider Ki Shaeri Se Intikhab

ادب نامہ کی طرف سے ذیشان حیدر کی شاعری سے انتخاب

Zeeshan Haider Ki Shaeri Se Intikhab

میانوالی سے تعلق رکھنے والے نوجوان شاعر جناب ذیشان حیدر ۔ وفاقی ادارہ امتحانات اسلام آباد میں ملازمت کے سبب آجکل اسلام آباد میں مقیم ہیں

تعارف : میانوالی سے تعلق رکھنے والے نوجوان شاعر جناب ذیشان حیدر ۔ وفاقی ادارہ امتحانات اسلام آباد میں ملازمت کے سبب آجکل اسلام آباد میں مقیم ہیں۔ ان کے کلام سے کچھ نظمیں اور غزلوں سے چند اشعار آپ احباب کی نظر

جانے کب آگ ہی نکل آئے
سوچتا ہوں میں ہاتھ ملتے ہوئے
تیری آنکھوں کی خیر مانگتا ہوں
میں ترے خواب سے نکلتے ہوئے
میں نے تیری طرف روانہ کیے
پانیوں پر چراغ جلتے ہوئے

دیکھ لے کیسے توازن سے لیے پھرتا ہوں
سر کی گٹھڑی میں خرد... اور جنوں سینے میں
تیری پوشاک سے خوشبو جو ادھر آجائے
پھر تو میں کھینچ کے.. اک سانس بھروں سینے میں
کل مرے دل نے مرے کان میں سرگوشی کی
کیا تماشہ ہو اگر میں نہ رہوں سینے میں

ایسے کنکر پھینکتا ہوں میں
پانی مجھ سے ڈر جاتا ہے
کمرا جتنا بھی خالی ہو
ایک چراغ سے بھر جاتا ہے

میں اپنے خواب میں مرنے لگا ہوں
سو یہ وعدہ خلافی تو نہیں ہے
میں برسوں بعد گهر کو جا رہا ہوں
یہ ہجرت کے منافی تو نہیں ہے؟؟

کون کہتا ہے کسی سے ٹوٹا
آئینہ کم نظری سے ٹوٹا
ٹوٹنے والا کہاں تھا یہ دل
یہ تری کوزہ گری سے ٹوٹا
آخری اشک جدا مجھ سے ہوا
آخری ربط خوشی سے ٹوٹا
ایک تو ٹوٹ گئی خاموشی
اور کیا تیری ہنسی سے ٹوٹا

زخموں کا اندمال نہیں ہو رہا جناب
گهر میں مرا خیال نہیں ہو رہا جناب
کوئی رلا رہا ہے اسے میرے سامنے
لیکن مجھے ملال نہیں ہو رہا جناب

دوست رکھے تجھے خدا آباد
دل بہت دیر تک رہا آباد
اس نے دیکھا تو جگمگانے لگا
ہوگیا جییسے آئینہ آباد
دل ترے نام پر بسایا گیا
تو کہیں اور ہو گیا آباد

آبائی مکانوں پر ستارہ
ﺯﻣﺎﻧﮯ ﺑﮩﮧ ﮔﺌﮯ ﮐﺘﻨﮯ
ﻭﮨﯽ ﺁﻧﮕﻦ ﺟﻮ ﻭﺳﻌﺖ ﻣﯿﮟ ﻣﺠﮭﮯ ﺩﻧﯿﺎ ﻟﮕﺎ ﮐﺮﺗﺎ ﺗﮭﺎ
ﻭﮦ ﺩﻭ ﺟﺴﺖ ﻧﮑﻼ
ﺟﺲ ﺟﮕﮧ ﺩﺍﻻﻥ ﺗﮭﺎ
ﺍﺏ ﺍﺱ ﺟﮕﮧ ﮨﻤﻮﺍﺭ ﻣﭩﯽ ﻣﻨﮧ ﭼﮍﺍﺗﯽ ﮨﮯ
ﺍُﺩﮬﺮ ﮨﻤﻮﺍﺭ ﻣﭩﯽ ﺳﮯ ﺍُﺩﮬﺮ
ﺩﻭ ﮈﮬﯿﺮﯾﺎﮞ ﻣﭩﯽ ﮐﯽ ﮐﺐ ﺳﮯ ﻣﻨﺘﻈﺮ ﮨﯿﮟ
ﮐﻮﺋﯽ ﻣﻠﻨﮯ ﮨﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﺗﺎ
ﯾﮩﯿﮟ ﺗﮭﮯ ﻭﮦ
ﺟﻮ ﺍﺏ ﻣﭩﯽ ﮨﯿﮟ
ﺟﻦ ﮐﮯ ﺧﺎﻝ ﻭ ﺧﺪ ﭘﻮﺭﮮ ﺑﺪﻥ ﭘﺮ ﺯﻭﺭ ﺩﮮ ﮐﺮ ﯾﺎﺩ ﮐﺮﺗﺎ
ﮨﻮﮞ
ﯾﮩﯿﮟ ﺗﮭﮯ ﻭﮦ
مرے بکسے ﻣﯿﮟ ﯾﺎﺩﻭﮞ ﺍﻭﺭ ﺩﮬﺎﮔﻮﮞ ﺳﮯ ﺟﮍﯼ ﻋﯿﻨﮏ ﺗﻮ ﺭﮐﮭﯽ
ﮨﮯ
ﻣﮕﺮ ﺩﺍﺩﺍ ﮐﯽ
ﻧﯿﻠﯽ ﺟﮭﻠﻤﻼﺗﮯ ﭘﺎﻧﯿﻮﮞ ﺟﯿﺴﯽ ﺩﻭ ﺁﻧﮑﮭﯿﮟ ﺑﮩﮧ ﮔﺌﯽ ﮨﯿﮟ
ﺍﻭﺭ ﺩﺍﺩﯼ ﮐﯽ ﺳﻨﺎﺋﯽ ﺳﺐ ﮐﺘﮭﺎﺋﯿﮟ
ﺧﺎﮎ ﺍﻧﺪﺭ ﺭﮦ ﮔﺌﯽ ﮨﯿﮟ
ﻭﻗﺖ ﺍﺏ ﺑﮭﯽ ﺑﮩﮧ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ
ﻣﯿﺮﯼ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ
ﺍﻭﺭ ﻗﺒﺮﻭﮞ ﺳﮯ
ﻭﮨﺎﮞ ﺁﻧﮕﻦ ﮐﮯ ﺳﻮﮐﮭﮯ ﭘﯿﮍ ﺗﮏ
ﺳﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﺍﺗﻨﯽ ﺧﺎﮎ ﺍُﮌﺗﯽ ﮨﮯ
ﺩﮐﮭﺎﺋﯽ ﮐﭽﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﺘﺎ....!!!

"گلیڈی ایٹر"
ﻋﺠﯿﺐ ﻣﻨﻈﺮ ﺗﮭﺎ
ﺷﻮﺭ ایسا
کہ
ﮐﺎﻥ ﺍﻧﺪﮬﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﭘﮍﮮ ﺗﮭﮯ۔

(جاری ہے)

۔۔۔۔
ﻣﯿﮟ ﺧﻮﺍﺏ ﻣﯿﮟ ﺍﮎ ﺗﻤﺎﺵ ﺑﯿﮟ ﺗﮭﺎ۔۔۔
ﻣﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﺘﺎ ﺗﮭﺎ۔۔۔۔
ﻭﮦ ﻟﮍ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ۔۔۔۔ﻭﮦ ﺍﯾﮏ ﺩﻭﺟﮯ ﺳﮯ ﻟﮍ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ۔۔۔
ﻏﺒﺎﺭ ﺍُﮌﺗﺎ ﺗﮭﺎ ﺍُﻥ ﺭﺗﮭﻮﮞ ﺳﮯ
ﺟﻮ ﺍُﻧﮑﮯ ﺟﺴﻤﻮﮞ ﮐﻮ ﺭﻭﻧﺪﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺭﻭﺍﮞ ﺗﮭﯿﮟ۔۔۔
ﻣﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﺘﺎ ﺗﮭﺎ۔۔۔۔
ﻭﮦ ﺳﺎﻧﺲ ﺍﻧﺪﺭ ﮐﻮ ﮐﮭﯿﻨﭽﺘﮯ ﺗﮭﮯ ﺗﻮ ﮐﮭﮍﮐﮭﮍﺍﺗﮯ ﺗﮭﮯ ۔

۔۔۔
ﺍﻭﺭ ﮨﻮﺍﺅﮞ ﮐﮯ ﺧﺎﻟﯽ ﺩﺍﻣﻦ ﻣﯿﮟ ﺩﮬﻮﮐﮧ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺗﮭﺎ ۔۔۔۔۔ﺳﺎﻧﺲ ﮐﻢ ﺗﮭﮯ۔۔۔
ﭘﮭﺮﺍُﻥ ﮐﮯ ﺯﺧﻤﻮﮞ ﺳﮯ ﺧﻮﻥ ﺭِﺳﺘﺎ ﺗﮭﺎ۔۔۔
ﺟﻮ ﺗﭙﮑﺘﯽ ﺯﻣﯿﮟ ﭘﮧ ﮔﺮﺗﺎ ﺗﮭﺎ۔۔۔
ﺍﻭﺭ ﭼﻤﮑﺘﺎ ﺗﮭﺎ۔۔۔۔
ﺻﺮﻑ ﻣﯿﮟ ﺗﮭﺎ ۔۔۔۔ ﻭﮨﺎﮞ ﭘﮧ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﻻﮐﮭﻮﮞ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺻﺮﻑ ﻣﯿﮟ ﺗﮭﺎ ﺟﻮ
ﺍﻧﮑﮯ ﺯﺧﻤﻮﮞ ﭘﮧ ﺭﻭ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ۔

۔۔۔
ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﮯ ﮐﻤﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﺳﻮﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ۔۔۔
ﻋﺠﯿﺐ ﻣﻨﻈﺮ ﺗﮭﺎ ۔۔۔۔ !
ﺧﻮﺍﺏ ﮐﮯ ﮔﮭﺮ ﺳﮯ ﻟﻮﭦ ﺁﯾﺎ ﮨﻮﮞ۔۔۔
ﺍﯾﮏ ﺟﮭﭩﮑﮯ ﺳﮯ ﺁﻧﮑﮫ ﮐﮭﻮﻟﯽ ﮨﮯ۔۔
ﺟﺴﻢ ﺁﺑﺎﺩ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ ﮨﮯ۔۔۔۔۔
ﺍﺏ ﺍﭘﻨﮯ ﺑﺴﺘﺮ ﮐﯽ ﺳﻠﻮﭨﻮﮞ ﭘﺮ ﺑﺪﻥ ﮐﻮ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﮐﺮﺗﮯ ﺳﻮﭼﺎ ﮨﮯ۔۔۔
ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺩﻧﯿﺎ ﮐﮯ ﺍﺱ ﺍﯾﺮﯾﻨﺎ ﻣﯿﮟ ﻟﮍ ﺭﮨﺎ ﮨﻮﮞ۔

۔۔
ﻣﺮﮮ ﺑﺪﻥ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﺧﻮﻥ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﻮﺍ ﭘﺴﯿﻨﮧ ﺯﻣﯿﮟ ﭘﮧ ﮔﺮﺗﺎ ﮨﮯ
ﺍﻭﺭ ﭼﻤﮑﺘﺎ ﮨﮯ۔۔۔
ﺁﺝ ﻣﺮﮮ ﻟﯿﮯ ﺑﮭﯽ ﻇﺎﻟﻢ ﮨﻮﺍ ﮐﮯ ﺩﺍﻣﻦ ﻣﯿﮟ ﺳﺎﻧﺴﯿﮟ ﮐﻢ ﮨﯿﮟ۔۔
ﮔﻠﯿﮉﯼ ﺍﯾﭩﺮ ﮨﻮﮞ۔۔۔
ﺍﻭﺭ ﮨﺎﺗﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﯾﮧ ﻗﻠﻢ ﮨﮯ۔۔۔
ﻣﺮﮮ ﻟﯿﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﺁﻧﮑﮫ ﻧﻢ ﮨﮯ؟؟؟؟

نظم
کوٹ رادها کشن
گوشت جلنے کی بو ہے
اگربتیوں سے نہیں جائے گی.....!!

(1983) ووٹ وصول ہوئے

Related Articles

Your Thoughts and Comments

Zeeshan Haider Ki Shaeri Se Intikhab - Read Urdu Article

Zeeshan Haider Ki Shaeri Se Intikhab is a detailed Urdu Poetry Article in which you can read everything about your favorite Poet. Zeeshan Haider Ki Shaeri Se Intikhab is available to read in Urdu so that you can easily understand it in your native language.

Zeeshan Haider Ki Shaeri Se Intikhab in Urdu has everything you wish to know about your favorite poet. Read what they like and who their inspiration is. You can learn about the personal life of your favorite poet in Zeeshan Haider Ki Shaeri Se Intikhab.

Zeeshan Haider Ki Shaeri Se Intikhab is a unique and latest article about your favorite poet. If you wish to know the latest happenings in the life of your favorite poet, Zeeshan Haider Ki Shaeri Se Intikhab is a must-read for you. Read it out, and you will surely like it.