Jazeere Ki Tarhaan Mere Nishani Kis Liye Hai

جزیرے کی طرح میری نشانی کس لیے ہے

جزیرے کی طرح میری نشانی کس لیے ہے

مرے چاروں طرف پانی ہی پانی کس لیے ہے

میں اکثر سوچتا ہوں دل کی گہرائی میں جا کر

زمیں پر ایک چادر آسمانی کس لیے ہے

بظاہر پُر سکوں اور دل کی ہر اک رگ سلامت

تو زیر ِ سطح دریا میں روانی کس لیے ہے

میں ٹوٹا ہوں تو اپنی کرچیاں بھی جوڑ لوں گا

بکھرنے پر مرے یہ شادمانی کس لیے ہے

یہ دل‘ بے حوصلہ دل‘ میرے کہنے میں نہیں جب

تو اپنے دل کی میں نے بات مانی کس لیے ہے

کریں لہجے بدل کر گفتگو اک دوسرے سے

ہمارے درمیاں یہ بے زبانی کس لیے ہے

سبھی کردار اپنا کام پورا کرچکے ہیں

پھر آخر نامکمّل یہ کہانی کس لیے ہے

اشفاق حسین

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(363) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ashfaq Hussain, Jazeere Ki Tarhaan Mere Nishani Kis Liye Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 32 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ashfaq Hussain.