Thikanay Yun To Hazaron Tre Jahan Mein Thay

ٹھکانے یوں تو ہزاروں ترے جہان میں تھے

ٹھکانے یوں تو ہزاروں ترے جہان میں تھے

کوئی صدا ہمیں روکے گی اس گمان میں تھے

عجیب بستی تھی چہرے تو اپنے جیسے تھے

مگر صحیفے کسی اجنبی زبان میں تھے

بہت خوشی ہوئی ترکش کے خالی ہونے پر

ذرا جو غور کیا تیر سب کمان میں تھے

علاج ڈھونڈھ نکالیں گے اپنی وحشت کا

جنوں نواز ابھی تک اسی گمان میں تھے

ہم ایک ایسی جگہ جا کے لوٹ کیوں آئے

جہاں سنا ہے کہ سب آخری زمان میں تھے

آشفتہ چنگیزی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(589) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ashufta Changezi, Thikanay Yun To Hazaron Tre Jahan Mein Thay in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 76 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ashufta Changezi.