Har Chand Be Nawa Hai Kore Gharray Ka Pani

ہر چند بے نوا ہے کورے گھڑے کا پانی

ہر چند بے نوا ہے کورے گھڑے کا پانی

دیوان میرؔ کا ہے کورے گھڑے کا پانی

اپلوں کی آگ اب تک ہاتھوں سے جھانکتی ہے

آنکھوں میں جاگتا ہے کورے گھڑے کا پانی

جب مانگتے ہیں سارے انگور کے شرارے

اپنی یہی صدا ہے کورے گھڑے کا پانی

کاغذ پہ کیسے ٹھہریں مصرعے مری غزل کے

لفظوں میں بہہ رہا ہے کورے گھڑے کا پانی

خانہ بدوش چھوری تکتی ہے چوری چوری

اس کا تو آئنہ ہے کورے گھڑے کا پانی

چڑیوں سی چہچہائیں پنگھٹ پہ جب بھی سکھیاں

چپ چاپ رو دیا ہے کورے گھڑے کا پانی

اس کے لہو میں شاید تاثیر ہو وفا کی

جس نے کبھی پیا ہے کورے گھڑے کا پانی

عزت ضمیر محنت دانش ہنر محبت

لیکن کبھی بکا ہے کورے گھڑے کا پانی

دیکھوں جو چاندنی میں لگتا ہے مجھ کو اسلمؔ

پگھلی ہوئی دعا ہے کورے گھڑے کا پانی

اسلم کولسری

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(968) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Aslam Kolsari, Har Chand Be Nawa Hai Kore Gharray Ka Pani in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 26 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Aslam Kolsari.