Hamain Bhi Muskurana Chahiye Tha

ہمیں بھی مسکرانا چاہیے تھا

ہمیں بھی مسکرانا چاہیے تھا

مگر کوئی بہانہ چاہیے تھا

محبت ریل کی پٹری نہیں تھی

کہیں تو موڑ آنا چاہیے تھا

ترے کاندھے پہ رکھ کر سر کسی دن

ہمیں بھی بھول جانا چاہیے تھا

مری لغزش خدا سے کیوں شکایت

ارے مجھ کو بتانا چاہیے تھا

یہ تم نے خود کو پتھر کر لیا کیوں

مری جاں ٹوٹ جانا چاہیے تھا

ہمی کیا توڑتے ساری خموشی

تمہیں بھی گنگنانا چاہیے تھا

عاصمہ طاہر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1370) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Asma Tahir, Hamain Bhi Muskurana Chahiye Tha in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 16 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Asma Tahir.