Suno Yeh Log Kehte Hain Nah Ke Hum Jo Bhichar Gaye To

سنو یہ لوگ کہتے ہیں نہ کہ ہم جو بچھڑ گئے تو

سنو یہ لوگ کہتے ہیں نہ کہ ہم جو بچھڑ گئے تو

بہت یاد آئیں گے

ہاں سچ ہی کہتے ہیں

مگر یاد تو وہی آتا ہے

جو دل کے قریب ہو

وگرنہ وہ

جسکی ضرورت ہو

سنو! یہ یاد کرنا بھی کتنا عذاب ہے

یادیں جلا دیتی ہیں

اپنا آپ بھلا دیتی ہیں

محو یاد بنا دیتی ہیں

اور پھر کچھ اور سوجھائی نہیں دیتا

بس اک عکس ہر سو چھایا رہتا ہے

پھر رنگینی دنیا کب دل بہلاتی ہے

اور خوبصورت چہرے کب دکھائی دیتے ہیں

سنو! اگر میں تم سے بچھڑ جاوں

مجھے یاد نہ کرنا

اگر میں یاد بھی آوں

تو میری یاد کو جھٹک دینا

کہیں دریچوں میں بند کر دینا

جو کبھی نہ کھل سکیں

کبھی نہ تم تک رسائی پا سکیں

سنو! میری یاد میں محو یاد نہ ہونا

بڑا عذاب ہیں یہ یادیں

روح تک جھلسا دیتی ہیں

بہت ظلم کرتے ہیں

وہ جو دعا دیتے ہیں

بہت یاد آئیں گے ہم

سنو! مجھے یاد نہ کرنا

میری یاد محو یاد نہ ہونا

اسماء طارق

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(316) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Asma Tariq, Suno Yeh Log Kehte Hain Nah Ke Hum Jo Bhichar Gaye To in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 6 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Asma Tariq.