Phir Koi Taza Sitam Wo Sitam Ijaad Kare

پھر کوئی تازہ ستم وہ ستم ایجاد کرے

پھر کوئی تازہ ستم وہ ستم ایجاد کرے

کاش اس کرب تغافل سے اب آزاد کرے

کہیں بنجر ہی نہ ہو جائے مرے دل کی زمیں

لالۂ زخم سے اس کشت کو آباد کرے

جانتا تھا کے ہر آواز پلٹ آئے گی

پھر تواتر سے دعا کیوں دل ناشاد کرے

اپنے لہجے کی ہی سختی کو تصور کر کے

لوٹ آنے کی شب ہجر میں فریاد کرے

گام در گام بدلتا ہے چلن ظالم کا

جانے اس بار نئی کون سی بیداد کرے

اس سے کہہ دے کوئی خاموش ہے ساز ہستی

چھیڑ کر وصل کا نغمہ مرا دل شاد کرے

لوگ انجام کی دہشت سے نکل آئے ہیں

اب جو کر پائے تو اس شہر کو برباد کرے

اسریٰ رضوی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(299) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Asra Rizvi, Phir Koi Taza Sitam Wo Sitam Ijaad Kare in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 27 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Asra Rizvi.