Guzray Hue Mah O Saal Ke Gham

گزرے ہوئے ماہ و سال کے غم

گزرے ہوئے ماہ و سال کے غم

تنہائی شب میں جاگ اٹھے ہیں

عمر رفتہ کی جستجو میں

اشکوں کے چراغ جل رہے ہیں

آسائش زندگی کی حسرت

ماضی کا نقش بن چکی ہے

حالات کی ناگزیر تلخی

ایک ایک نفس میں بس گئی ہے

ناکامئ آرزو کو دل نے

تسلیم و رضا کے نام بخشے

ملنے کی خوشی، بچھڑنے کا غم

کیا کیا تھے فریب زندگی کے

اک عمر میں اب سمجھ سکے ہیں

خوشیوں کا فسوں گریز پا ہے

اب ترک دعا کی منزلیں ہیں

دامان طلب سمٹ چکا ہے

ناکامئ شوق مٹتے مٹتے

جینے کا شعور دے گئی ہے

یہ غم ہے نوائے شب کا حاصل

یہ درد متاع زندگی ہے

اجڑی ہوئی ہر روش چمن کی

دیتی ہے سراغ رنگ و بو کا

ویران ہیں زندگی کی راہیں

روشن ہے چراغ آرزو کا

ایاز محمود ایاز

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(734) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ayaz Mahmood Ayaz, Guzray Hue Mah O Saal Ke Gham in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 21 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ayaz Mahmood Ayaz.