Karta Hoon Main Kuch Aaise Hi Dewaar Se Batain

کرتا ہوں میں کچھ ایسے ہی دیوار سے باتیں

کرتا ہوں میں کچھ ایسے ہی دیوار سے باتیں

جیسے کہ کوئی کرتا ہو دلدار سے باتیں

شب ان کو پرکھنے میں گزر جاتی ہے ساری

میں کان میں بھر لاتا ہوں بازار سے باتیں

خاموش ہوں جاگیر سنبھالے ہوۓ اپنی

لے جاۓ گی دنیا مرے اظہار سے باتیں

ہر سمت سماعت کا بڑا خشک تھا جنگل

سو پھیل گئیں آگ کی رفتار سے باتیں

اب بیچ میں دیوار کی یہ باڑ ہے ورنہ

آجاتی تھیں اکثر یہاں اس پار سے باتیں

میں خاک نشیں ہوں مری ہمراز ہے مٹی

بھولے سے بھی کرتا نہیں دستار سے باتیں

مایوس نہیں ہے ترے انکار سے عزمی

بڑھتی ہیں مری جاں اسی انکار سے باتیں

عزم الحسنین عزمی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1214) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Azm Ul Hasnain Azmi, Karta Hoon Main Kuch Aaise Hi Dewaar Se Batain in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 8 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Azm Ul Hasnain Azmi.