Yeh Raat

یہ رات

ستارے چپ ہیں کہ چلتی ہے تیز تیز ہوا

یہ رات اپنی محبت کی رات بھی تو نہیں

فضا میں یادوں کے جگنو چمک رہے ہیں ابھی

حسین یادوں کو لیکن ثبات بھی تو نہیں

غم حیات سے مانوس ہو چلا ہے دل

نئے نئے ہی سہی سانحات بھی تو نہیں

بدل کے رکھ دیں جو لیل و نہار دنیا کے

ابھی حیات کے وہ حادثات بھی تو نہیں

وہی ہے خون تمنا وہی ہے حسرت غم

یہ موت بھی تو نہیں ہے حیات بھی تو نہیں

یہ رات جہد مسلسل کی ایک رات سہی

تباہیوں کو لیے بار بار گزرے گی

کوئی بتائے کہاں تک کہ زندگی کی یہ رات

فسردہ گزری ہے اور سوگوار گزرے گی

ابھی تو روز یہی فکر ہے جئیں کیسے

ابھی تو رات یونہی بے قرار گزرے گی

سکون دل کے لیے آج بھی یقیں سا ہے

یہی چمن سے خزاں شرمسار گزرے گی

نئے چراغ جلائیں امید فردا سے

کبھی تو وادئ غم سے بہار گزرے گی

یہ رات ایک نئی یادگار لائی ہے

سجا کے زخموں کے پھولوں کا ہار لائی ہے

باقر مہدی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1256) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Baqar Mehdi, Yeh Raat in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 51 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Baqar Mehdi.