Sekha Jo Qalam Se Naye Khali Ka Bajana

سیکھا جو قلم سے نئے خالی کا بجانا

سیکھا جو قلم سے نئے خالی کا بجانا

کر نغمہ بقاؔ فکرت عالی کا بجانا

تسمہ مرے مت دل پہ دوالی کا بجانا

یہ لٹ جو ہے چابک اسی کالی کا بجانا

مارا کیے مطرب بہ چگاں دل پہ تھپیڑے

سیکھے اسی طبلے پہ وہ تالی کا بجانا

الفت میں تری اے بت بے مہر و محبت

آیا ہمیں اک ہاتھ سے تالی کا بجانا

لے مول مرے دل کا وہ جب ساغر نازک

یاد آوے نہ کاش اس کو سفالی کا بجانا

اس نالۂ بے صوت نے حیرت میں سکھایا

ساز اب مجھے تصویر نہالی کا بجانا

بس اے غم غماز مری آہ جگر سے

لعنت ہے ترا بام پہ تھالی کا بجانا

بے ساقیٔ و مے سوچ میں ہے کام ہمارا

بیٹھے سر‌ ناخن سے پیالی کا بجانا

اس کودک بے ہوش کا آفت ہے شب اٹھ کر

ٹھیکوں پہ مری آہ کے تالی کا بجانا

سنتا ہوں کسی پوچ کی جب دف زنیٔ فکر

آتا ہے مجھے یاد ڈفالی کا بجانا

کرتا ہے بقاؔ نالہ تو کر جھانج میں دل سے

بے جھانج ہے کیا اس دف خالی کا بجانا

بقا اللہ بقاؔ

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1416) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of BAQAULLAH 'BAQA', Sekha Jo Qalam Se Naye Khali Ka Bajana in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 24 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of BAQAULLAH 'BAQA'.