یوں ہی جلائے چلو دوستو بھرم کے چراغ

(4486) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments