Is Qader Naz Hai Kyun Aap Ko Yaktai Ka

اس قدر ناز ہے کیوں آپ کو یکتائی کا

اس قدر ناز ہے کیوں آپ کو یکتائی کا

دوسرا نام ہے وہ بھی مری تنہائی کا

کیا چھپے راز الٰہی دل شیدائی کا

عرصۂ حشر تو بازار ہے رسوائی کا

جان لے جائے گا آنا شب تنہائی کا

کون اب روکنے والا ہے مری آئی کا

خوگر رنج و بلا حشر کے دن کیا خوش ہوں

کہ وہ مال آج ہوا ہے شب تنہائی کا

زندہ ہے نام شہادت کا اسی کے دم سے

تیرے کشتہ نے کیا کام مسیحائی کا

ہر گلی کوچے میں پامال اسے ہو جانا

دل ہے یا نقش قدم ہے کسی ہرجائی کا

اس ادب سے تہہ شمشیر تڑپنا اے دل

کہ گماں تیری تپش پر ہو شکیبائی کا

فتنے بھی قاعدے سے اٹھتے ہیں جب اٹھتے ہیں

کیا سلیقہ ہے تمہیں انجمن آرائی کا

وہ یہ کہتے ہیں مرا صبر پڑے گا تجھ پر

اب مجھے رنج نہیں اپنی شکیبائی کا

کیا غرض ہے مری تقدیر کو مجھ سے پوچھے

آبرو کا ہے طلب گار کہ رسوائی کا

واں شب وعدہ ملی پاؤں میں مہندی اس نے

یاں کلیجا کوئی ملتا ہے تمنائی کا

رات بھر شمع رہی ہجر میں وہ بھی خاموش

ملتجی تھا تری تصویر سے گویائی کا

سر مرا کاٹ کے دہلیز پر اپنی رکھ دو

شوق باقی ہے ابھی ناصیہ فرسائی کا

یوں نہ مقبول ہوا ہوگا کسی کا سجدہ

بت کو ارمان رہا میری جبیں سائی کا

ہو گیا پرتو رخسار سے کچھ اور ہی رنگ

میں نے منہ چوم لیا اس کے تماشائی کا

تھم گئے جم گئے آنکھوں میں لہو کے قطرے

خون ظاہر ہے مرے صبر و شکیبائی کا

بن گیا داغ جگر مہر قیامت اے داغؔ

پر ابھی رنگ وہی ہے شب تنہائی کا

داغؔ دہلوی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(539) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of DAGH DEHLVI, Is Qader Naz Hai Kyun Aap Ko Yaktai Ka in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 125 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of DAGH DEHLVI.