Chand Ho Bhi Tu Samundar Nahi Hone Wala

چاند ہو بھی تو سمندر نہیں ہونے والا

چاند ہو بھی تو سمندر نہیں ہونے والا

فریم اس رات کا منظر نہیں ہونے والا

دیکھ لی خاک دھنک چاک فلک دیکھ لیا

میں کسی بات پہ ششدر نہیں ہونے والا

تیس دن تک اسی دیوار پہ لرزے گا یہ عکس

ختم اک دن میں دسمبر نہیں ہونے والا

رسیّاں کھینچ لو آفاق کی چاہے جتنی

آسماں سر کے برابر نہیں ہونے والا

پیاس کی فصل اگی رہتی ہے ہر وقت یہاں

دشت بھی کھیت ہے بنجر نہیں ہونے والا

ایک قطرہ جو ہتھیلی پہ ہوا لائی ہے

سیپ میں پڑنے سے گوہر نہیں ہونے والا

نیند کے سبز سمندر! ترے ساحل پہ مجھے

خیمہ ء خواب میّسر نہیں ہونے والا

جو بدن آگ اگلتا ہو مساموں سے طریرؔ

برف میں رکھنے سے پتھر نہیں ہونے والا

دانیال طریر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(860) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Daniyal Tareer, Chand Ho Bhi Tu Samundar Nahi Hone Wala in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 56 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Daniyal Tareer.