Doo Ansu Beh Jayeen Tu Hum Bhi Jeene Se Lagte Hain

دو آنسو بہہ جائیں تو ہم بھی جینے سے لگتے ہیں

دو آنسو بہہ جائیں تو ہم بھی جینے سے لگتے ہیں

کیکر پہ انگور کے گچھے دکھ پینے سے لگتے ہیں

ایک تمنّا سیرِ فلک سے لوٹی تو معلوم ہوا

قوسِ قزح کے رستے جنت کے زینےسے لگتے ہیں

تنہا پڑ جائیں تو اپنا ماس کترنے لگ جائیں

ایسے روگ پرندوں کو اکثر کینے سے لگتے ہیں

دانیال طریر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1311) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Daniyal Tareer, Doo Ansu Beh Jayeen Tu Hum Bhi Jeene Se Lagte Hain in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Qataat, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Hope Urdu Poetry. Also there are 56 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Daniyal Tareer.