Mujhe Hansane Ki Adat Thi Magar Wo Or Kuch Samjha

مجھے ہنسنے کی عادت تھی مگر وہ اور کچھ سمجھا

مجھے ہنسنے کی عادت تھی مگر وہ اور کچھ سمجھا

ذرا سی اک شرارت تھی مگر وہ اور کچھ سمجھا

مری ہر بات پر ہنسنے سے اکثر وہ الجھتا تھا

مجھے اس سے محبت تھی مگر وہ اور کچھ سمجھا

میں ہنستی تھی کہ رنج و غم مرا ظاہر نہ ہو اس پر

مقدر میں جو ظلمت تھی مگر وہ اور کچھ سمجھا

میں سن کر ٹال جاتی تھی نصیحت کی سبھی باتیں

مری دل سے بغاوت تھی مگر وہ اور کچھ سمجھا

سنانا حال دل چاہا مگر اس کو بھی جلدی تھی

بڑی اچھی حکایت تھی مگر وہ اور کچھ سمجھا

منانا چاہتی تھی سچے دل سے اے دعاؔ اس کو

اسے مجھ سے شکایت تھی مگر وہ اور کچھ سمجھا

دعا علی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1538) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Dua Ali, Mujhe Hansane Ki Adat Thi Magar Wo Or Kuch Samjha in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 16 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Dua Ali.