Aankh Main Ansu Hain Ehsas Masarat Dil Main Hai

آنکھ میں آنسو ہیں احساس مسرت دل میں ہے

آنکھ میں آنسو ہیں احساس مسرت دل میں ہے

ایک فردوس نظارہ آپ کی محفل میں ہے

ہر جفا تیری مناسب ہر ستم تیرا درست

اب وہی میری تمنا ہے جو تیرے دل میں ہے

جب بجز محبوب ہو جاتی ہے اوجھل کائنات

اک مقام ایسا بھی جذب شوق کی منزل میں ہے

فصل گل میں بے تحاشا ہنسنے والو ہوشیار

اضطراب دل کا پہلو بھی سکون دل میں ہے

جس کو دوری سے حضوری میں سوا ہو اضطراب

وہ پریشان محبت کس قدر مشکل میں ہے

دہر کے ہنگامۂ شیخ و برہمن سے بلند

اور بھی ہنگامہ اک گرداب نوح دل میں ہے

اب کوئی شایان‌ جلوہ ہے نہ شایان کلام

تو اسی منزل میں بہتر ہے کہ جس منزل میں ہے

ناسزا ہے اس کے جلووں کی نزاکت کے لئے

وہ غم حاصل جو تیرے عشق کے حاصل میں ہے

میں تو خود اٹھنے کو ہوں بدلو نہ انداز نظر

تم جو کہتے ہچکچاتے ہو وہ میرے دل میں ہے

اپنے مرکز سے ستاروں پر جو کرتا ہوں نظر

جس کو جس منزل میں چھوڑا تھا اسی منزل میں ہے

موم کر دیتی ہے جو فولاد و آہن کا جگر

وہ بھی اک جھنکار آواز شکست دل میں ہے

کون ہے احسانؔ میری زندگی کا رازدار

کیا کہوں کس طرح مرنے کی تمنا دل میں ہے

احسان دانش

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1421) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ehsan Danish, Aankh Main Ansu Hain Ehsas Masarat Dil Main Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 66 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 5 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ehsan Danish.