Jala Hai Haay Kis Jan Chaman Ki Shama Mahfil Say

جلا ہے ہائے کس جان چمن کی شمع محفل سے

جلا ہے ہائے کس جان چمن کی شمع محفل سے

مہک پھولوں کی آتی ہے شرار آتش دل سے

یہ دامان حوادث سے قیامت تک نہ گل ہوگا

چراغ دل مرا روشن ہے ان کی شمع محفل سے

جناب خضر ہم کو خاک رستے پر لگائیں گے

کہ منزل بے خودوں کی ہے معرا قید منزل سے

ٹھہر بھی اے خیال حشر اور اک جام پینے دے

سرکتا ہے ابھی ظلمت کا پردہ خانۂ دل سے

سحر نے لے کے انگڑائی طلسم ناز شب توڑا

فلک پر حسن کی شمعیں اٹھیں تاروں کی محفل سے

بڑھا ہے کون یہ گرداب کی خوراک ہونے کو

کہ اٹھا شور ماتم یک بیک انبوہ ساحل سے

مری بالیں سے اٹھ کر رونے والو یہ بھی سوچا ہے

چلا ہوں کس کی محفل میں اٹھا ہوں کس کی محفل سے

ہے اس کمبخت کو ضد سوز باطن سے پگھل جاؤں

نگاہوں نے تمہاری کہہ دیا ہے کیا مرے دل سے

نہ دامن گیر دل ہو نا خدا پھر کوئی نظارہ

خدا کے واسطے کشتی بڑھا آغوش ساحل سے

سپرد بیخودی کر دے فرائض عقل خود بیں کے

ہٹا دے اس سیہ باطن کا پہرا خانۂ دل سے

ہر اک ذرہ ہے دل اے جانے والے دیکھ کر چلنا

ہزاروں ہستیاں لپٹی پڑی ہیں خاک منزل سے

مری بے باک نظریں ان کی جانب اٹھ ہی جاتی ہیں

ابھی احسانؔ میں واقف نہیں آداب محفل سے

احسان دانش

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(2338) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ehsan Danish, Jala Hai Haay Kis Jan Chaman Ki Shama Mahfil Say in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 66 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 5 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ehsan Danish.