Kahan Mahfil Main Mujh Tak Baada Gulfam Aata Hai

کہاں محفل میں مجھ تک بادۂ گلفام آتا ہے

کہاں محفل میں مجھ تک بادۂ گلفام آتا ہے

جو میرا نام آتا ہے تو خالی جام آتا ہے

نہ آؤ تم تو پھر کیوں ہچکیوں پر ہچکیاں آئیں

انہیں روکو یہ کیوں پیغام پر پیغام آتا ہے

یہ ساون یہ گھٹا یہ بجلیاں یہ ٹوٹتی راتیں

بھلا ایسے میں دل والوں کو کب آرام آتا ہے

ادب اے جذبۂ بیباک یہ آہ و فغاں کیسی

کہ ایسی زندگی سے موت پر الزام آتا ہے

مدد اے مرگ ناکامی نقاہت کا یہ عالم ہے

بڑی مشکل سے ہونٹوں تک کسی کا نام آتا ہے

خدا رکھے تجھے اے سر زمین شہر خاموشاں

یہیں آ کر ہر اک بے چین کو آرام آتا ہے

معاذ اللہ مری آنکھوں کا اظہار تنگ ظرفی

ٹپک پڑتے ہیں آنسو جب تمہارا نام آتا ہے

زمانے میں نہیں دلدادۂ مہر و وفا کوئی

تجھے دھوکا ہے اے دل کون کس کے کام آتا ہے

احسان دانش

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(539) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ehsan Danish, Kahan Mahfil Main Mujh Tak Baada Gulfam Aata Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 66 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ehsan Danish.