Na Jane Sehr Ye Kya Tu Ne Chashm Yar Kiya

نہ جانے سحر یہ کیا تو نے چشم یار کیا

نہ جانے سحر یہ کیا تو نے چشم یار کیا

کہ میں نے ہوش کے جامے کو تار تار کیا

فسوں عجیب یہ اے موسم بہار کیا

کہ خار زار کو ہم رنگ لالہ زار کیا

مہک رہا ہے ہر اک گل کا جامۂ رنگیں

صبا نے باغ میں کیا ذکر زلف یار کیا

نہ پوچھو پچھلے پہر اپنی یاد کا عالم

تمہارا ذکر ستاروں سے بار بار کیا

نسیم صبح نے آ کر وہ راگنی چھیڑی

ہر ایک پھول نے کانٹے کو جھک کے پیار کیا

مرے جہان‌ محبت میں پڑ گئی ہلچل

سکون دل نے مجھے اور بے قرار کیا

بھر آئے دیدۂ انجم میں اشک مجبوری

جگر کو تھام کے جب ہم نے ذکر یار کیا

تڑپ کے آبلہ پا ایک بار پھر اٹھے

یہ کسی نے تذکرۂ آمد بہار کیا

گزر چکی ہیں جو احسانؔ ان کی محفل میں

انہیں قرار کی گھڑیوں نے بیقرار کیا

احسان دانش

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1181) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ehsan Danish, Na Jane Sehr Ye Kya Tu Ne Chashm Yar Kiya in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 66 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ehsan Danish.