Mujh Se Tu Qaim Na Hoti Ik Namaz

مجھ سے تو قائم نہ ہوتی اک نماز

مجھ سے تو قائم نہ ہوتی اک نماز

پَر خدا مجھ سے کراتا ہی رہا

اپنا قیدی ہوں سَو اپنے آپ سے

اپنے قبضے کو چھڑاتا ہی رہا

خیر و شر کی جنگ میں دونوں طرف

خود کو مَیں خود سے لڑاتا ہی رہا

خیمہِ دل حق کا یا باطل کا ہے

جو رہا اس میں بتاتا ہی رہا

اب نہیں، لیکن عماد اک دَور میں

تُو بھی تو دھوکے میں آتا ہی رہا

عماد احمد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(466) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Emad Ahmad, Mujh Se Tu Qaim Na Hoti Ik Namaz in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 22 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Emad Ahmad.