Quantum Leap

کوانٹم لیپ(Quantum Leap)

ہمیں اب آگہی اور روشنی اک چیز لگتے ہیں

اگرہوآنکھ کے اندرتواس کوروشنی کہیے

اگر ہو قلب کے اندر تواس کوآگہی کہیے

سفر باہر کا ہو تو روشنی سے آگہی لیجے

سفر اندر کا ہو تو آگہی سے روشنی لیجے

حقیقت دیکھنی ہو ظاہری اسباب کی تو آنکھ کو کچھ نُور تو درکار ہوتا ہے

حقیقت جاننی ہو داخلی اسرار کی توقلب کو کچھ نُور تو درکار ہوتا ہے

معمہ ہو اگر مادّہ سے وابستہ تو اس کی آگہی آنکھوں سے ملتی ہے

مسائل ہوں اگر ما بعد ا لطبیعات کے بارے

تو پھر قلبی نظر آگاہ کرتی ہے

اگر قلب و نظر یکجان ہو جائیں

اگر ظاہر کی آنکھیں باطنی آنکھوں سے مل کر زاویہ ترتیب دیتی ہوں

اگر قلبِ بشر بس آگہی کی روشنی میں راہ ڈھونڈے تو

سفر اندر یا باہر کا نہیں رہتا

کہ یہ اندر یا باہر تو فقط کچھ استعارے ہیں

حقیقت کے کنارے ہیں

حقیقت تو سمندر ہے

نہیں بلکہ سمندر بھی فقط اک استعارہ ہے

حقیقت کا بیاں انسان کی تخلیق کردہ کچھ زبانوں میں نہیں ممکن

حقیقت کا بیاں انسان کی ایجاد کردہ علمی اصلاحات سے

پردے میں ہے اب تک

بیاں کرنے کی کوشش میں یہاں اتنا اشارہ ہے

بیاں کرنے کا بس اتنا ہی یارا ہے

کہ گر قلب و نظریک جان ہو جائیں

تو ایسے آدمی کوآگہی اور روشنی اک چیز لگتے ہیں

تو اس کے راستے بس نُور میں تفویض لگتے ہیں

ستاروں کے سفربھی پاؤں کو دہلیز لگتے ہیں!

عماد احمد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(392) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Emad Ahmad, Quantum Leap in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 22 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.8 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Emad Ahmad.