Aaj Dil Hae Keh Sar E Sham Bujha Lagta Hae

آج دل ہے کہ سر شام بجھا لگتا ہے

آج دل ہے کہ سر شام بجھا لگتا ہے

یہ اندھیرے کا مسافر بھی تھکا لگتا ہے

اپنے بہکے ہوئے دامن کی خبر لی نہ گئی

جس کو دیکھو چراغوں سے خفا لگتا ہے

باغ کا پھول نہیں لالۂ صحرا ہوں میں

لو کا جھونکا بھی مجھے باد صبا لگتا ہے

تنگئ ظرف نظر کثرت نظارۂ دہر

پیاس کچی ہو تو ہر جام بھرا لگتا ہے

کس تکلف سے گرہ کھول رہا ہوں دل کی

عقدۂ درد ترا بند قبا لگتا ہے

خار زاروں کو سکھا دے نہ گلستاں کا چلن

یہ مسافر تو کوئی آبلہ پا لگتا ہے

دیکھ تو روزن زنداں سے ذرا سوئے چمن

آج کیوں دل کا ہر اک زخم ہرا لگتا ہے

کون افضلؔ کے سوا ایسی غزل چھیڑے گا

دوستو یہ وہی آشفتہ نوا لگتا ہے

اعزاز افضل

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1188) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ezaz Afzal, Aaj Dil Hae Keh Sar E Sham Bujha Lagta Hae in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 20 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ezaz Afzal.