Har Aik Gaam Pe Asoodgi KhaRi Hoti

ہر ایک گام پہ آسودگی کھڑی ہوگی

ہر ایک گام پہ آسودگی کھڑی ہوگی

سفر کی آخری منزل بہت کڑی ہوگی

یہ اپنے خون کی لہروں میں ڈوبتی کشتی

بھنور سے بھاگ کے ساحل پہ جا پڑی ہوگی

مسافرو یہ خلش نوک خار کی تو نہیں

ضرور پاؤں تلے کوئی پنکھڑی ہوگی

ترے خلوص تحفظ میں شک نہیں لیکن

ہوا میں ریت کی دیوار گر پڑی ہوگی

نظام قید مسلسل میں کیسی آزادی

کھلے جو پاؤں تو ہاتھوں میں ہتھکڑی ہوگی

ترے فرار کی سرحد قریب تھی لیکن

مری تلاش ذرا دور جا پڑی ہوگی

تمہارے دور مسلسل کی منضبط تاریخ

ہمارے رقص مسلسل کی اک کڑی ہوگی

مرے گمان کی بنیاد کھوکھلی نکلی

ترے یقیں کی عمارت کہاں کھڑی ہوگی

اعزاز افضل

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(656) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ezaz Afzal, Har Aik Gaam Pe Asoodgi KhaRi Hoti in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 20 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.8 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ezaz Afzal.