Hum Ne Maey Khanay Ki Taqdees Bacha Li Hoti

ہم نے میخانے کی تقدیس بچا لی ہوتی

ہم نے میخانے کی تقدیس بچا لی ہوتی

کوئی بوتل تو یہاں خون سے خالی ہوتی

اس کی بنیاد اگر زہد نے ڈالی ہوتی

دین کی طرح یہ دنیا بھی خیالی ہوتی

انجمن داغ جگر کی متحمل نہ ہوئی

کاش ہم نے بھی کوئی شمع جلا لی ہوتی

سچ تو یہ ہے کہا گر جرم نہ ثابت ہوتا

ہم نے خود مانگ کے جینے کی سزا لی ہوتی

آج اس موڑ پہ ہم ہیں کہ اگر بس چلتا

لوٹ جانے کی کوئی راہ نکالی ہوتی

تم نے قانون میں ترمیم کی زحمت کیوں کی

ہم نے خود قید کی میعاد بڑھا لی ہوتی

وسعت شوق نے رکھا نہ کہیں کا ہم کو

ورنہ ہر دل میں جگہ اپنی بنا لی ہوتی

اعزاز افضل

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(477) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ezaz Afzal, Hum Ne Maey Khanay Ki Taqdees Bacha Li Hoti in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 20 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ezaz Afzal.