Lahoo Ne Kia Teray Khanjar Ko Dilkashi Di Hae

لہو نے کیا ترے خنجر کو دل کشی دی ہے

لہو نے کیا ترے خنجر کو دل کشی دی ہے

کہ ہم نے زخم بھی کھائے ہیں داد بھی دی ہے

لباس چھین لیا ہے برہنگی دی ہے

مگر مذاق تو دیکھو کہ آنکھ بھی دی ہے

ہماری بات پہ کس کو یقین آئے گا

خزاں میں ہم نے بشارت بہار کی دی ہے

دھرا ہی کیا تھا ترے شہر بے ضمیر کے پاس

مرے شعور نے خیرات آگہی دی ہے

حیات تجھ کو خدا اور سر بلند کرے

تری بقا کے لیے ہم نے زندگی دی ہے

کہاں تھی پہلے یہ بازار سنگ کی رونق

سر شکستہ نے کیسی ہماہمی دی ہے

چراغ ہوں مری کرنوں کا قرض ہے سب پر

بقدر ظرف نظر سب کو روشنی دی ہے

چلی نہ پھر کسی مظلوم کے گلے پہ چھری

ہماری موت نے کتنوں کو زندگی دی ہے

ترے نصاب میں داخل تھی آستاں بوسی

مرے ضمیر نے تعلیم سرکشی دی ہے

کٹے گی عمر سفر جادہ آفرینی میں

تری تلاش نے توفیق گمرہی دی ہے

ہزار دیدہ تصور ہزار رنگ نظر

ہوس نے حسن کو بسیار چہرگی دی ہے

اعزاز افضل

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(504) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ezaz Afzal, Lahoo Ne Kia Teray Khanjar Ko Dilkashi Di Hae in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 20 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ezaz Afzal.