Roswa Bhi Hoay Jaam PaTakna Bhi Na Aaya

رسوا بھی ہوئے جام پٹکنا بھی نہ آیا

رسوا بھی ہوئے جام پٹکنا بھی نہ آیا

رندوں کو سلیقے سے بہکنا بھی نہ آیا

وہ لوگ مری طرز سفر جانچ رہے ہیں

منزل کی طرف جن کو ہمکنا بھی نہ آیا

تھا جن میں سلیقہ وہ بھری بزم میں روئے

ہم کو تو کہیں چھپ کے سسکنا بھی نہ آیا

ہم ایسے بلانوش کہ چھلکاتے ہی گزری

تم ایسے تنک ظرف چھلکنا بھی نہ آیا

ہم جاگ رہے تھے سو ابھی جاگ رہے ہیں

اے ظلمت شب تجھ کو تھپکنا بھی نہ آیا

للچائی کوئی زلف نہ مچلا کوئی دامن

اس باغ کے پھولوں کو مہکنا بھی نہ آیا

کم بخت سوئے دیر و حرم بھاگ رہی ہیں

گلشن کی ہواؤں کو سنکنا بھی نہ آیا

لہراتی ذرا پیاس ذرا کان ہی بجتے

ان خالی کٹوروں کو کھنکنا بھی نہ آیا

اعزاز افضل

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(786) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ezaz Afzal, Roswa Bhi Hoay Jaam PaTakna Bhi Na Aaya in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 20 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ezaz Afzal.