Sham Khamosh Hae PaeRoN Pe Ojala Kam Hae

شام خاموش ہے پیڑوں پہ اجالا کم ہے

شام خاموش ہے پیڑوں پہ اجالا کم ہے

لوٹ آئے ہیں سبھی ایک پرندہ کم ہے

دیکھ کر سوکھ گیا کیسے بدن کا پانی

میں نہ کہتا تھا مری پیاس سے دریا کم ہے

خود سے ملنے کی کبھی گاؤں میں فرصت نہ ملی

شہر آئے ہیں یہاں ملنا ملانا کم ہے

آج کیوں آنکھوں میں پہلے سے نہیں ہیں آنسو

آج کیا بات ہے کیوں موج میں دریا کم ہے

اپنے مہمان کو پلکوں پہ بٹھا لیتی ہے

مفلسی جانتی ہے گھر میں بچھونا کم ہے

بس یہی سوچ کے کرنے لگے ہجرت آنسو

اپنی لاشوں کے مقابل یہاں کاندھا کم ہے

دل کی ہر بات زباں پر نہیں آتی ہے فہیمؔ

میں نے سوچا ہے زیادہ اسے لکھا کم ہے

فہیم جوگاپوری

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(568) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Faheem Jogapuri, Sham Khamosh Hae PaeRoN Pe Ojala Kam Hae in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 10 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Faheem Jogapuri.