Gir Jaye Jo Deewar To Maatam Nahi Karte

گر جائے جو دیوار تو ماتم نہیں کرتے

گر جائے جو دیوار تو ماتم نہیں کرتے

کرتے ہیں بہت لوگ مگر ہم نہیں کرتے

ہے اپنی طبیعت میں جو خامی تو یہی ہے

ہم عشق تو کرتے ہیں مگر کم نہیں کرتے

نفرت سے تو بہتر ہے کہ رستے ہی جدا ہوں

بے کار گزر گاہوں کو باہم نہیں کرتے

ہر سانس میں دوزخ کی تپش سی ہے مگر ہم

سورج کی طرح آگ کو مدھم نہیں کرتے

کیا علم کہ روتے ہوں تو مر جاتے ہوں فیصلؔ

وہ لوگ جو آنکھوں کو کبھی نم نہیں کرتے

فیصل عجمی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(741) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Faisal Ajami, Gir Jaye Jo Deewar To Maatam Nahi Karte in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 52 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Faisal Ajami.