Kuch Mohtasbon Ki KHalwat Main Kuch Waiz Ke Ghar Jati Hai

کچھ محتسبوں کی خلوت میں کچھ واعظ کے گھر جاتی ہے

کچھ محتسبوں کی خلوت میں کچھ واعظ کے گھر جاتی ہے

ہم بادہ کشوں کے حصے کی اب جام میں کم تر جاتی ہے

یوں عرض و طلب سے کم اے دل پتھر دل پانی ہوتے ہیں

تم لاکھ رضا کی خو ڈالو کب خوئے ستم گر جاتی ہے

بیداد گروں کی بستی ہے یاں داد کہاں خیرات کہاں

سر پھوڑتی پھرتی ہے ناداں فریاد جو در در جاتی ہے

ہاں جاں کے زیاں کی ہم کو بھی تشویش ہے لیکن کیا کیجے

ہر رہ جو ادھر کو جاتی ہے مقتل سے گزر کر جاتی ہے

اب کوچۂ دلبر کا رہ رو رہزن بھی بنے تو بات بنے

پہرے سے عدو ٹلتے ہی نہیں اور رات برابر جاتی ہے

ہم اہل قفس تنہا بھی نہیں ہر روز نسیم صبح وطن

یادوں سے معطر آتی ہے اشکوں سے منور جاتی ہے

فیض احمد فیض

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(967) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Faiz Ahmed Faiz, Kuch Mohtasbon Ki KHalwat Main Kuch Waiz Ke Ghar Jati Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 121 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Faiz Ahmed Faiz.