Nah Kisi Pay Zakhm Ayaan Koi Nah Kisi Ko Fikar Rafoo Ki Hain

نہ کسی پہ زخم عیاں کوئی نہ کسی کو فکر رفو کی ہے

نہ کسی پہ زخم عیاں کوئی نہ کسی کو فکر رفو کی ہے

نہ کرم ہے ہم پہ حبیب کا نہ نگاہ ہم پہ عدو کی ہے

صف زاہداں ہے تو بے یقیں صف مے کشاں ہے تو بے طلب

نہ وہ صبح ورد و وضو کی ہے نہ وہ شام جام و سبو کی ہے

نہ یہ غم نیا نہ ستم نیا کہ تری جفا کا گلا کریں

یہ نظر تھی پہلے بھی مضطرب یہ کسک تو دل میں کبھو کی ہے

کف باغباں پہ بہار گل کا ہے قرض پہلے سے بیشتر

کہ ہر ایک پھول کے پیرہن میں نمود میرے لہو کی ہے

نہیں خوف روز سیہ ہمیں کہ ہے فیضؔ ظرف نگاہ میں

ابھی گوشہ گیر وہ اک کرن جو لگن اس آئینہ رو کی ہے

فیض احمد فیض

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(2660) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Faiz Ahmed Faiz, Nah Kisi Pay Zakhm Ayaan Koi Nah Kisi Ko Fikar Rafoo Ki Hain in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 121 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Faiz Ahmed Faiz.