Loog Kehte Hain Buhat Hum Ne Kamayi Dunya

لوگ کہتے ہیں بہت ہم نے کمائی دنیا

لوگ کہتے ہیں بہت ہم نے کمائی دنیا

آج تک میری سمجھ میں نہیں آئی دنیا

جب نظر نامۂ اعمال کے دفتر پہ پڑی

نیکیوں پر مجھے ابھری نظر آئی دنیا

ظاہری آنکھوں سے دیکھو تو دکھائی دے پہاڑ

باطنی آنکھوں سے دیکھو تو ہے رائی دنیا

یہ قدم تیرے تعاقب میں چلے ہیں کتنا

یہ بتائے گی مری آبلہ پائی دنیا

جتنے دکھ درد تحائف میں دیئے ہے تو نے

لے کے آئے گی ازل سب کی دوائی دنیا

فیضؔ جو پھرتی ہے خود خانہ بدوشوں کی طرح

کیا کرے گی وہ میری راہ نمائی دنیا

فیض خلیل آبادی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(653) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Faiz KhalilAbadi, Loog Kehte Hain Buhat Hum Ne Kamayi Dunya in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 15 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Faiz KhalilAbadi.