Bay Ajal Kaam Na Apna Kisi OnwaaN Nikla

بے اجل کام نہ اپنا کسی عنواں نکلا

بے اجل کام نہ اپنا کسی عنواں نکلا

دم تو نکلا مگر آزردۂ احساں نکلا

آ گئی ہے ترے بیمار کے منہ پر رونق

جان کیا جسم سے نکلی کوئی ارماں نکلا

دل آگاہ سے کیا کیا ہمیں امیدیں تھیں

وہ بھی قسمت سے چراغ تہ داماں نکلا

دل بھی تھا منہ سے بس اک آہ نکل جانے تک

آگ سینے میں لگا کر غم پنہاں نکلا

چارہ گر ناصح مشفق دل بے صبر و قرار

جو ملا عشق میں غم خوار وہ ناداں نکلا

شکوہ منظور نہیں تذکرۂ عشق نہ چھیڑ

کہ وہ درپردہ مرا حال پریشاں نکلا

بجلیاں شاخ نشیمن پہ بچھی جاتی ہے

کیا نشیمن سے کوئی سوختہ ساماں نکلا

اب جنوں سے بھی توقع نہیں آزادی کی

چاک داماں بھی باندازۂ داماں نکلا

ہائے وہ وعدۂ فردا کی مدد وقت اخیر

ہائے وہ مطلب دشوار کہ آساں نکلا

شوق بیتاب کا انجام تحیر پایا

دل سمجھتے تھے جسے دیدۂ حیراں نکلا

اس نے کیا سینۂ صد چاک سے کھینچا فانیؔ

دل میں کہتا ہوں وہ کہتا ہے کہ پیکاں نکلا

فانی بدایونی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(989) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Fani Badayuni, Bay Ajal Kaam Na Apna Kisi OnwaaN Nikla in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 102 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Fani Badayuni.