Jeeney Ki Hai Omeed Nah Marnay Ka Yaqeen Hai

جینے کی ہے امید نہ مرنے کا یقیں ہے

جینے کی ہے امید نہ مرنے کا یقیں ہے

اب دل کا یہ عالم ہے نہ دنیا ہے نہ دیں ہے

گم ہیں رہ تسلیم میں طالب بھی طلب بھی

سجدہ ہی در یار ہے سجدہ ہی جبیں ہے

کچھ مظہر باطن ہوں تو کچھ محرم ظاہر

میری ہی وہ ہستی ہے کہ ہے اور نہیں ہے

ایذا کے سوا لذت ایذا بھی ملے گی

کیوں جلوہ گہ ہوش یہاں دل بھی کہیں ہے

مایوس سہی حسرتئ موت ہوں فانیؔ

کس منہ سے کہوں دل میں تمنا ہی نہیں ہے

فانی بدایونی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1047) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Fani Badayuni, Jeeney Ki Hai Omeed Nah Marnay Ka Yaqeen Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 102 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Fani Badayuni.