Naam Badnam Hae Na Haq Shab E Tanhai Ka

نام بدنام ہے ناحق شب تنہائی کا

نام بدنام ہے ناحق شب تنہائی کا

وہ بھی اک رخ ہے تری انجمن آرائی کا

آ چلا ہے مجھے کچھ وعدۂ فردا کا یقیں

دل پہ الزام نہ آ جائے شکیبائی کا

اب نہ کانٹوں ہی سے کچھ لاگ نہ پھولوں سے لگاؤ

ہم نے دیکھا ہے تماشا تری رعنائی کا

دونوں عالم سے گزر کر بھی زمانہ گزرا

کچھ ٹھکانا بھی ہے اس بادیہ پیمائی کا

خود ہی بیتاب تجلی ہے ازل سے کوئی

دیکھنے کے لیے پردہ ہے تمنائی کا

لگ گئی بھیڑ یہ دیوانہ جدھر سے گزرا

ایک عالم کو ہے سودا ترے سودائی کا

پھر اسی کافر بے مہر کے در پر فانی

لے چلا شوق مجھے ناصیہ فرسائی کا

فانی بدایونی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1329) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Fani Badayuni, Naam Badnam Hae Na Haq Shab E Tanhai Ka in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 102 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Fani Badayuni.