Nah Ibtida Ki Khabar Hai Nah Intaha Maloom

نہ ابتدا کی خبر ہے نہ انتہا معلوم

نہ ابتدا کی خبر ہے نہ انتہا معلوم

رہا یہ وہم کہ ہم ہیں سو وہ بھی کیا معلوم

دعا تو خیر دعا سے امید خیر بھی ہے

یہ مدعا ہے تو انجام مدعا معلوم

ہوا نہ راز رضا فاش وہ تو یہ کہیے

مرے نصیب میں تھی ورنہ سعیٔ نا معلوم

مری وفا کے سوا غایت جفا کیوں ہو

تری جفا کے سوا حاصل وفا معلوم

کچھ ان کے رحم پہ تھی یوں ہی زندگی موقوف

کہ ان کو راز محبت بھی ہو گیا معلوم

ترے خیال کے اسرار بے خودی میں کھلے

ہمیں چھپا نہ سکے ورنہ دل کو کیا معلوم

فریب امن میں کچھ مصلحت تو ہے ورنہ

سکون کشتی و توفیق ناخدا معلوم

وہ التفات کہ تھا اس کی انتہا بھی ہے

خدا کی مار کہ دل کو یہی نہ تھا معلوم

یہ زندگی کی ہے روداد مختصر فانیؔ

وجود درد مسلم علاج نا معلوم

فانی بدایونی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(338) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Fani Badayuni, Nah Ibtida Ki Khabar Hai Nah Intaha Maloom in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 102 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.8 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Fani Badayuni.