Qisam Nah Khao Taghaful Se Baz Anay Ki

قسم نہ کھاؤ تغافل سے باز آنے کی

قسم نہ کھاؤ تغافل سے باز آنے کی

کہ دل میں اب نہیں طاقت ستائے جانے کی

ہماری موت نے کچھ مختصر کیا ورنہ

کچھ انتہا ہی نہ تھی عشق کے فسانے کی

گری نہ برق کچھ اس خوف سے مرے ہوتے

تڑپ کے آگ بجھا دوں نہ آشیانے کی

تمہارا درد تو درماں بنا لیا ہم نے

اب اور سوچیے تدبیر دل دکھانے کی

زمانہ کفر محبت سے کر چکا تھا گریز

تری نظر نے پلٹ دی ہوا زمانے کی

پلٹ پلٹ کے قفس ہی کی سمت جاتا ہوں

کسی نے راہ بتائی نہ آشیانے کی

نجات دی غم دنیا سے درد دل نے مجھے

یہ ایک راہ ملی غم سے چھوٹ جانے کی

وہ صبح عید کا منظر ترے تصور میں

وہ دل میں آ کے ادا تیرے مسکرانے کی

بتا رہا ہے ہر انداز خاک فانیؔ کا

یہ خاک ہے اسی کافر کے آستانے کی

فانی بدایونی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(777) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Fani Badayuni, Qisam Nah Khao Taghaful Se Baz Anay Ki in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 102 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 5 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Fani Badayuni.