Jism MeiN Gonjta Hae Rooh Pe Likha Dukh Hae

جسم میں گونجتا ہے روح پہ لکھا دکھ ہے

جسم میں گونجتا ہے روح پہ لکھا دکھ ہے

تو مری آنکھ سے بہتا ہوا پہلا دکھ ہے

کیا کروں بیچ بھی سکتا نہیں گنجینۂ زخم

کیا کروں بانٹ بھی سکتا نہیں ایسا دکھ ہے

یہ تب و تاب زمانے کی جو ہے نا یارو

کیجیے غور تو لگتا ہے کہ سارا دکھ ہے

تم مرے دکھ کے تناسب کو سمجھتے کب ہو

جتنی خوشیاں ہیں تمہاری مرا اتنا دکھ ہے

ایسا لگتا ہے مرے ساتھ نہیں کچھ بھی اور

ایسا لگتا ہے مرے ساتھ ہمیشہ دکھ ہے

مجھ سے مت آنکھ ملاؤ کہ مری آنکھوں میں

شہر کی زرد گھٹن دشت سا پیاسا دکھ ہے

لے گئے لوگ وہ دریائے جواں اپنے ساتھ

اور مرے ہاتھ جو آیا ہے وہ صحرا دکھ ہے

کیا بتاؤں کہ لیے پھرتا ہوں دکھ کتنے قدیم

تم سمجھتی ہو فقط مجھ کو تمہارا دکھ ہے

اس کے لہجے میں تھکن ہے نہ ہی آثار مرگ

اس کی آنکھوں میں مگر سب سے انوکھا دکھ ہے

ہم کسی شخص کے دکھ سے نہیں ملتے حیدرؔ

جو زمانے سے الگ ہے وہ ہمارا دکھ ہے

فقیہہ حیدر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1118) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Faqeeh Haidar, Jism MeiN Gonjta Hae Rooh Pe Likha Dukh Hae in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 22 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 5 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Faqeeh Haidar.