KHUDA Khamosh Tha Makhlooq Jumle Kass Rahi Thi

خدا خموش تھا مخلوق جُملے کَس رہی تھی

خدا خموش تھا مخلوق جُملے کَس رہی تھی

میں سر خمیدہ تھا اور چشم ِ وقت ہنس رہی تھی

کَل اُس زمانے سے میرا گزر ہوا جس میں

لہو لہان زمینوں پہ دنیا بس رہی تھی

سڑک پہ لاش تھی اور کیمرے اٹھائے لوگ

مگر وہ چیخ جو اک کان کو ترس رہی تھی ؟؟

ہماری مشکیں اُسی دور میں ہوئیں خالی

کہ پانیوں پہ بھی جب آگ ہی برس رہی تھی

میں قہقہوں کی مدد سے چھپا رہا تھا اُسے

وہ ہجر سے بھری ہچکی جو دل کو ڈس رہی تھی

ہماری ناک تلک کتنے باغ لائی وہ

جو پاک سچی ہوا اس بدن سے مَس رہی تھی

جدید جسم پہ میں کھینچتا لکیریں کیا

قدیم حسن کی لو میرے پیش و پس رہی تھی

سیاہ شہر سے ہجرت کا وقت وہ تھا جب

چراغ والوں کی تعداد آٹھ دَس رہی تھی

خلا خلا کا دھواں پھا نکتے پھرے ہم لوگ

زمین ذاد تھے افلاک کی ہوس رہی تھی

فقیہہ حیدر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(636) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Faqeeh Haidar, KHUDA Khamosh Tha Makhlooq Jumle Kass Rahi Thi in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Friendship, Bewafa, Heart Broken Urdu Poetry. Also there are 22 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Friendship, Bewafa, Heart Broken poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Faqeeh Haidar.