Meri Nayam Main Talwar Akhri Nahi Hai

مری نیام میں تلوار آخری نہیں ہے

مری نیام میں تلوار آخری نہیں ہے

میں آخری ہوں مگر وار آخری نہیں ہے

سڑک سڑک پہ ہجوم ِ سیہ لباساں ہے

سو کشت و خون کا بازار آخری نہیں ہے

ہمارے بعد بھی جاری رہے گی دل داری

ہمارا عشق میں کردار آخری نہیں ہے

ستارے خاک پہ پھر کس لیے اُتر آئے

اگر یہ صبح ِ عزادار آخری نہیں ہے

وہ گال بارہ میہنے مہکتے رہتے ہیں

یہ رنگ اور یہ مہکار آخری نہیں ہے

یہ دستکوں کا تسلسل ابھی تھمے گا نہیں

کہ در ہے آخری دیوار آخری نہیں ہے

یہ شہر حسن سے آباد ہے ہمارے لیے

ترا فسوں ہی فسوں کار آخری نہیں ہے

سخن کی آگ جلائے ہوئے ہے ایک جہان

فقیہہ تیرا قلم کار آخری نہیں ہے

فقیہہ حیدر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1381) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Faqeeh Haidar, Meri Nayam Main Talwar Akhri Nahi Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken Urdu Poetry. Also there are 22 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Faqeeh Haidar.