Jaise Khushiyoon Main Ghaam Nahi Hote

جیسے خوشیوں میں غم نہیں ہوتے

جیسے خوشیوں میں غم نہیں ہوتے

آگ پانی بہم نہیں ہوتے

مدتوں ہم قریب رہتے ہیں

فاصلے پھر بھی کم نہیں ہوتے

زندگی بھر کے ساتھ میں اکثر

ہم سفر ہم قدم نہیں ہوتے

سانحے دل پہ جو گزرتے ہیں

سب کے سب تو رقم نہیں ہوتے

پوجا ہوتی ہے زندگی بھر کی

چار دن کے صنم نہیں ہوتے

جو کبھی مجھ پہ دوستوں کے تھے

اب وہ لطف و کرم نہیں ہوتے

فرح اقبال

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1301) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Farah Iqbal, Jaise Khushiyoon Main Ghaam Nahi Hote in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 22 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Farah Iqbal.