Buhat Qadeem Sa Wo Ghar

بہت قدیم سا وہ گھر

بہت قدیم سا وہ گھر ،

بہت بہت قدیم سا۔۔۔۔ !

وہ پتھروں کا گھر کوئی،

اسی کے ایک تنگ سے کواڑ میں کھڑی ہوئی،

وہ کون تھی؟

وہ کون تھی جو خواب میں علیل تھی ؟؟؟

وہ جس کے زرد جسم کا تمہیں بہت خیال تھا !

رقیب تھی مری ؟

مگر بھلی بھلی لگی مجھے ۔۔۔ !!

تھی اس کے زرد رنگ پر گھنی اداسیوں کی رُت،

پگھل پگھل کے گر رہا تھا اس کی آستیں پہ دکھ ۔۔۔۔

مری تو روح خوف سے لرز گئی،

نگاہ چیخنے لگی ،

"یہ کون ہے، یہ کون ہے؟"

اسی گھڑی ،

تمہاری اک نگاہ نے جھکے جھکے یہ کہہ دیا،

کہ" یہ علیل ہے بہت،

اسے مرا ذرا سا دھیان چاہیئے ،

یہ جب بھی تندرست ہو گئی میں لوٹ آؤں گا "

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اے زرد رُو!

میں جانتی نہیں تجھے

تو کون تھی، نہیں پتا

مگر تری حیات کی دعا مِری حیات ہے !!

تو تندرست ہو کے کب دکھائے گی

فریحہ نقوی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(722) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Fareeha Naqvi, Buhat Qadeem Sa Wo Ghar in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 35 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Fareeha Naqvi.