Yeh Kia Hoa Keh Sabhi Ab Tu Dagh Jalnay Lagay

یہ کیا ہوا کہ سبھی اب تو داغ جلنے لگے

یہ کیا ہوا کہ سبھی اب تو داغ جلنے لگے

ہوا چلی تو لہو میں چراغ جلنے لگے

مٹا گیا تھا لہو کے سبھی نشاں قاتل

مگر جو شام ڈھلی سب چراغ جلنے لگے

اک ایسی فصل اترنے کو ہے گلستاں میں

زمانہ دیکھے کہ پھولوں سے باغ جلنے لگے

نگاہ طائر زنداں اٹھی تھی گھر کی طرف

کہ سوز آتش گریاں سے داغ جلنے لگے

اب اس مقام پہ ہے موسموں کا سرد مزاج

کہ دل سلگنے لگے اور دماغ جلنے لگے

اب آ بھی جا کہ یوں ہی دور دور رہنے سے

یہ میرے ہونٹ وہ تیرے ایاغ جلنے لگے

نہا کے نہر سے سالمؔ پری وہ کیا نکلی

کہ تاب حسن سے خود اصطباغ جلنے لگے

فرحان سالم

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(726) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Farhan Salim, Yeh Kia Hoa Keh Sabhi Ab Tu Dagh Jalnay Lagay in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 15 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.8 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Farhan Salim.