TumheN Os Say Mohabbat Hae Tu Himmat KioN NahiN Kartay

تمہیں اس سے محبت ہے تو ہمت کیوں نہیں کرتے

تمہیں اس سے محبت ہے تو ہمت کیوں نہیں کرتے

کسی دن اس کے در پہ رقص وحشت کیوں نہیں کرتے

علاج اپنا کراتے پھر رہے ہو جانے کس کس سے

محبت کر کے دیکھو نا محبت کیوں نہیں کرتے

تمہارے دل پہ اپنا نام لکھا ہم نے دیکھا ہے

ہماری چیز پھر ہم کو عنایت کیوں نہیں کرتے

مری دل کی تباہی کی شکایت پر کہا اس نے

تم اپنے گھر کی چیزوں کی حفاظت کیوں نہیں کرتے

بدن بیٹھا ہے کب سے کاسۂ امید کی صورت

سو دے کر وصل کی خیرات رخصت کیوں نہیں کرتے

قیامت دیکھنے کے شوق میں ہم مر مٹے تم پر

قیامت کرنے والو اب قیامت کیوں نہیں کرتے

میں اپنے ساتھ جذبوں کی جماعت لے کے آیا ہوں

جب اتنے مقتدی ہیں تو امامت کیوں نہیں کرتے

تم اپنے ہونٹھ آئینے میں دیکھو اور پھر سوچو

کہ ہم صرف ایک بوسہ پر قناعت کیوں نہیں کرتے

بہت ناراض ہے وہ اور اسے ہم سے شکایت ہے

کہ اس ناراضگی کی بھی شکایت کیوں نہیں کرتے

کبھی اللہ میاں پوچھیں گے تب ان کو بتائیں گے

کسی کو کیوں بتائیں ہم عبادت کیوں نہیں کرتے

مرتب کر لیا ہے کلیات زخم اگر اپنا

تو پھر احساسؔ جی اس کی اشاعت کیوں نہیں کرتے

فرحت احساس

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(2231) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Farhat Ehsas, TumheN Os Say Mohabbat Hae Tu Himmat KioN NahiN Kartay in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 113 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Farhat Ehsas.