Jo Kuchh Bhi Hae Nazar MeiN So Wehm E Namood Hae

جو کچھ بھی ہے نظر میں سو وہم نمود ہے

جو کچھ بھی ہے نظر میں سو وہم نمود ہے

عالم تمام ایک طلسم وجود ہے

آرائش نمود سے بزم جمود ہے

میری جبین شوق دلیل سجود ہے

ہستی کا راز کیا ہے غم ہست و بود ہے

عالم تمام دام رسوم و قیود ہے

عکس جمال یار سے وہم نمود ہے

ورنہ وجود خلق بھی خود بے وجود ہے

اب کشتگان شوق کو کچھ بھی نہ چاہیئے

فرش زمیں ہے سایۂ چرخ کبود ہے

ہنگامۂ بہار کی اللہ رے شوخیاں

زاغ و زغن کا شور بھی صوت و سرود ہے

فرحت کانپوری

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(225) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Farhat Kanpuri, Jo Kuchh Bhi Hae Nazar MeiN So Wehm E Namood Hae in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 10 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Farhat Kanpuri.